”پنجاب روزگار سکیم“تحریک انصاف کی حکومت کا عوام کے لئے تحفہ اور عام آدمی کے دل کی آواز ہے،میاں اسلم اقبال

 صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کا پنجاب روزگا سکیم کی افتتاحی تقریب سے خطاب

”پنجاب روزگار سکیم“تحریک انصاف کی حکومت کا عوام کے لئے تحفہ اور عام آدمی کے دل کی آواز ہے،میاں اسلم اقبال

لاہور:.صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نے کہا ہے کہ ”پنجاب روزگار سکیم“تحریک انصاف کی حکومت کا عوام کے لئے تحفہ اور عام آدمی کے دل کی آواز ہے۔اس سکیم کے تحت ایسے ہنر مندوں کو آسان قرضے فراہم کئے جائیں گے جو ہنر تو رکھتے ہیں لیکن سرمایہ نہیں۔پنجاب روزگار سکیم کے تحت نیا کاروبار شروع کرنے،موجودہ کاروبار کے فروغ اور کورونا سے متاثرہ کاروبار کی بحالی کے لئے ایک لاکھ سے ایک کروڑ روپے تک آسان قرضے دئیے جائیں گے۔ماضی کے حکمرانوں نے اڑھائی سو ارب روپے اورنج لائن ٹرین کے منصوبے پر لگا دئیے اگر یہ رقم لوگوں کو روزگار کی فراہمی کے لئے صرف کی جاتی تو آج حالات کچھ اور ہوتے۔سابق ادوار میں اپنی ذات کی تشہیر کے لئے نمائشی منصوبے لگائے۔غربت اور بھوک،میٹرواورنج لائن اور نمائشی منصوبوں سے ختم نہیں ہوتی بلکہ روزگار کی فراہمی سے ہوتی ہے۔30سال تک حکمرانی کرنے والوں نے صرف شعبدہ بازی کی۔عوام کے حقیقی مسائل کے حل پر توجہ نہ دی۔پنجاب حکومت نے وزیراعظم کے روزگار کے فراہمی کے ویژن کے مطابق وزیراعلی عثمان بزدار کی قیادت میں پنجاب روزگار سکیم کا اجراء کیا ہے۔

صوبائی وزیر نے ان خیالات کا اظہار آج ایوان وزیراعلی میں ”پنجاب روزگار سکیم“ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔صوبائی وزیر نے کہا کہ پی ٹی آئی اقتدار میں آئی تو صرف دو سپیشل اکنامک زون موجود تھے ہم نے عثمان بزدار کی قیادت میں دو سال کی مدت میں رحیم یار خان،بھلوال،وہاڑی،فیصل آباد اوربہاولپور میں سپیشل اکنامک زونز بنا دئیے ہیں۔مظفر گڑھ لیہ روڈ پر 20ہزار ایکڑ رقبے پاکستان کا سب سے بڑا انڈسٹریل اکنامک زونز بنایا جارہا ہے۔لاہورسیالکوٹ اور لاہور ملتان موٹر وے پر بھی انڈسٹریل اسٹیٹ بنارہے ہیں۔اس کے علاوہ صوبے بھر میں چھوٹے انڈسٹریل زونز بھی بنائے جارہے ہیں۔تمام انڈسٹریل اسٹیٹس میں ون ونڈ آپریش کی سہولت فراہم کر دی گئی ہے۔پنجاب حکومت نے ترازو فیس ختم کرکے ڈھائی لاکھ چھوٹے دکانداروں کو فائدہ پہنچایا ہے۔نئے سیمنٹ پلانٹس لگانے کے لئے 23درخواستیں آ چکی ہیں۔بدقسمتی سے سیمنٹ پلانٹ لگانے کے خواہشمندوں کو 10،10سالوں تک این او سی نہیں ملا۔ہماری حکومت نے این او سی جاری کرنے والے پانچوں متعلقہ محکموں کو ٹائم لان کے اندر این او سی جاری کرنے کا پابند بنایا ہے۔آئندہ چند روز میں 7سے 8این او سی جاری ہو جائیں گے۔صوبائی وزیر نے کہا کہ معاشی سرگرمیوں کے حوالے سے پنجاب بدل رہا ہے۔ملک کو اتنے برآمدی آرڈر مل چکے ہیں جنہیں پورا کرنا مشکل ہورہا ہے۔فیصل آباد میں 11سو ملین ڈالر کی براہ راست سرمایہ کاری آ چکی ہے۔پنجاب سکل ڈویلپمنٹ اتھارٹی قائم کر دی ہے جس کے تحت فنی تعلیم کے اداروں کو ایک چھتری تلے لایا گیا ہے۔پرائس کنٹرول اتھارٹی،سستا سہولت بازار اتھارٹی کے قیام کا عمل آخری مراحل میں ہے۔انسپکٹر لیس رجیم کے

مسودہ قانون منظوری کے لئے کابینہ کو بھجوایا جائے گا۔صوبائی وزیر نے کہا کہ وزیراعظم کی کرونا سے نمٹنے کی موثر حکمت عملی کے مثبت نتائج سامنے آئے ہیں۔پنجاب حکومت نے کورونا وبا کے دوران ٹیکسوں میں 56ارب روپے کا بڑا ریلیف دیا ہے جس سے صوبے میں معاشی سرگرمیاں بڑھیں گی۔

٭٭٭٭