میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے بورڈ کا اجلاس

 وزیر اعلیٰ خود روز گار سکیم کا دائرہ کار بڑھانے کا فیصلہ ڈیرہ غازی خان، ساہیوال، جھنگ اور میانوالی میں سمال انڈسٹریل اسٹیٹس کے قیام کی منظوری

میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے بورڈ کا اجلاس

لاہور : صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن بورڈ کا110واں اجلاس منعقد ہوا۔ جس میں وزیر اعلیٰ خود روز گار سکیم پر پیش رفت، معاشی اثرات اور اہداف کے حصول کا تفصیلی جائزہ لیاگیا۔ اجلاس کے دوران وزیر اعلیٰ خود روز گار سکیم کادائرہ کار بڑھانے کا فیصلہ کیا گیا۔ سکیم کے تحت ہنرمند افراد کو کاروبار شروع کرنے کے لئے بلاسود قرضوں کی حد بڑھا ئی جائے گی۔ بورڈ کی سب کمیٹی کی سفارشات، پیپرا، لاڈیپارٹمنٹ اور بورڈ ممبران کی آراء کی روشنی میں اخوت کے ساتھ معاہدے کا مسودہ تیار کیا جائے گا۔

اخوت کے ساتھ مل کر وزیر اعلیٰ انصاف روزگار سکیم شروع کی جائے گی۔ بورڈ نے ڈیرہ غازی خان، ساہیوال،جھنگ اور میانوالی میں سمال انڈسٹریل اسٹیٹس کے قیام کی اصولی منظوری دے دی۔ بورڈ نے مختلف علاقوں میں پیسک کی بے کار پڑی اراضی فروخت کرنے کی منظوری دے دی۔گوجرانوالہ اور وزیر آباد کی سمال انڈسٹریل اسٹیٹس بجلی کی فراہمی کے لیے گیپکو کے ساتھ معاہدہ کی منظوری بھی دے دی گئی۔

اجلاس کے دوران بورڈ نے پیسک کے بعض مالی اور انتظامی امور کی منظوری بھی دی۔  صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  وزیر اعلیٰ خود روز روزگار سکیم کے تحت بے روزگار اور ہنرمند نوجوانوں کو بلاسود قرضے دئیے جارھے ہیں، اس سکیم کے تحت 29لاکھ افراد کو بلاسود قر ضے تقسیم کئے جا کے ہیں۔ سکیم پر عملدرآمد کی نگرانی کے لئے پیسک میں مانیٹر نگ سیل بنے گا۔

صوبائی وزیر نے آن لائن ڈیش بورڈ بنانے کی بھی ہدایت کی۔ میاں اسلم اقبال نے ہدایات دیں کہ پیسک میں جدید ٹیکنالوجی کو فروغ دے کر اس کی استعداد کار بڑھائی جائے۔ اجلاس میں وزیر اعلیٰ انصاف روزگار سکیم کے حوالے سے بورڈ کی سب کمیٹی کی سفارشات کی منظوری بھی  دی گئی۔ ایم ڈی پیسک مدثر ملک، بورڈ ممبران ریاض حمید چوہدری، امجد نعیم اور دیگر ممبران نے پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے دفتر میں اجلاس میں شرکت کی۔ سیکرٹری صنعت و تجارت کیپٹن ریٹائرڈ ظفر اقبال اور بعض دیگر ممبران نے وڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شرکت کی۔