مقبوضہ کشمیر پاکستانی نقشے میں شامل، وفاقی کابینہ نے منظوری دیدی: وزیراعظم عمران خان

اپوزیشن اور کشمیری قیادت کی بھی تائید، یہی سرکاری نقشہ اقوام متحدہ میں پیش کیا جائے گا، پاکستان کا نیا سیاسی نقشہ پہلا قدم ہے‘آج تاریخ کا اہم ترین دن ہے۔ نیا سیاسی نقشہ جموں وکشمیر پر ہمارے مؤقف کا اظہار اور پاکستانی قوم کی امنگوں کی ترجمانی کرتا ہے

مقبوضہ کشمیر پاکستانی نقشے میں شامل، وفاقی کابینہ نے منظوری دیدی: وزیراعظم عمران خان

اسلام آباد: پاکستان نے ملک کا نیا سیاسی نقشہ جاری کردیا‘بھارتی غیر قانونی مقبوضہ کشمیرکو پاکستان کا حصہ ظاہر کردیا گیا۔ وفاقی کابینہ نے پاکستان کے نئے نقشے کی منظوری دے دی، نیا نقشہ اقوام متحدہ میں پیش کیا جائے گا‘ وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان کا نیا سیاسی نقشہ پہلا قدم ہے‘آج تاریخ کا اہم ترین دن ہے۔ نیا سیاسی نقشہ جموں وکشمیر پر ہمارے مؤقف کا اظہار اور پاکستانی قوم کی امنگوں کی ترجمانی کرتا ہے‘ کابینہ ، تمام اپوزیشن اور کشمیری لیڈرشپ نے نقشے کی تائید کی ہے۔

انشاء اللّٰہ جلد منزل پر پہنچیں گے ‘ کشمیر کا مسئلہ دنیا کے ہر فورم پر اٹھائیں گے،منزل تک پہنچنے سے پہلے اس کا تصور ذہن میں لانا لازمی ہوتا ہے‘مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی قراردادوں میں ہے۔ منگل کو پاکستان کے نئے سیاسی نقشہ کے اجراء پر قوم کو مبارکباد دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بھارت نے 5 اگست کا جو اقدام اٹھایا یہ نقشہ اس کی نفی ہے، مقبوضہ کشمیر کے لوگ پاکستان کا حصہ بننا چاہتے ہیں۔

مجھے یقین ہے کہ وہ جلد اپنی منزل تک ضرور پہنچیں گے۔انہوں نے کہا کہ وفاقی کابینہ نے سیاسی نقشے کی باقاعدہ منظوری دی‘مسئلہ کشمیر کا حل اقوام متحدہ کی قراردادوں میں ہے۔ عمران خان نے کہا کہ ہم سیاسی جدوجہد کریں گے، فوجی جدوجہد کو نہیں مانتے‘جب تک زندہ ہوں پاکستانی قوم کشمیر کے لئے جدوجہد کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ نقشے میں لائن آف کنٹرول کو واضح طور پر ظاہر کیا گیا ہے، کشمیر پاکستان کا حصہ بنے گا یہ نقشہ پہلا قدم ہے‘پاکستان کے تمام سیاستدانوں نے نئے نقشے کی تائید کی۔ آج جاری کیاگیا یہی نقشہ اب پاکستان کا سیاسی نقشہ ہوگا،بھارت کشمیری عوام پر ظلم وبربریت کے پہاڑ توڑرہا ہے۔