جو دکاندار گاھک کو ماسک نہیں دے سکتا، دکان بند کرکے گھر چلا جائے، میاں اسلم اقبال

مارکیٹوں کے اوقات کار نہیں بڑھیں گے، مستقل طور پر غروب آفتاب تک دکانیں بند کرنے پر غور ، صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کیانار کلی اور دیگر بازاروں کے دورے، ایس اوپیز پر عملدرآمد کا جائزہ لیا

جو دکاندار گاھک کو ماسک نہیں دے سکتا، دکان بند کرکے گھر چلا جائے، میاں اسلم اقبال

لاہور :صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نیکہا ھے کہ مارکیٹوں اور شاپنگ مالزکے اوقات کار نہیں بڑھیں گے بلکہ آئندہ مستقل طور پر غروب آفتاب تک دکانیں بند کرنے پر مشاورت کی جا رہی ھے، شام 7بجے تک کھلنے والی دکانیں سات بجے تک ھی کھلیں گی، خلاف ورزی پر نہ صرف دکان دار بلکہ متعلقہ ایس ایچ او کے خلاف بھی کارروائی ھوگی، دکان دار اپنے گاھکوں کو ماسک فراہم کریں، جو دکاندار گاھک کو ماسک نہیں دے سکتا وہ دکان بند کرکے گھر چلا جائے

صوبائی وزیر صنعت و تجارت نے ان خیالات کا اظہار آج انارکلی بازار کے دورہ کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، میاں اسلم اقبال نے ضلعی انتظامیہ کے ھمراہ انارکلی اور دیگر بازاروں کا دورہ کیا اور ایس اوپیز پر عملدرآمد کا جائزہ لیا، صوبائی وزیر نے دکان داروں کو گاھکوں کو ماسک فراہم کرنے کی تلقین کی اور بعض دکان دار وں کو وارننگ بھی دی. صوبائی وزیر میاں اسلم اقبال نے کہا کہ عوام سے ایک بار پھر اپیل کرتا ہوں کہ بزرگوں اور بچوں کو مارکیٹوں میں نہ آنے دیں، سماجی فاصلے برقرار رکھے جائیں، شہری ماسک پہنیں اور غیر ضروری طور پر گھروں سے نہ نکلیں، کرونا وائرس سے ابھی کسی دوا کے ساتھ لڑنا ممکن نہیں صرف احتیاطی تدابیر اختیار کر کے اس سے بچا جاسکتا ھے.

انہوں نے کہا کہ ایس اوپیز پر عملدرآمد یقینی بنانا حکومت کے ساتھ تاجروں کی بھی ذمہ داری ھے، خلاف ورزی پر دکان نہیں بلکہ پوری مارکیٹ بند ہو گی اور ابھی خلاف ورزی پر دکانیں بند کرنے کا دورانیہ طے نہیں ھوا ھے، صوبائی وزیر نے کہا کہ طبی اور معاشی ماہرین کی آراء کی روشنی میں تمام فیصلے کئے جا رھے ہیں، وبا سے نمٹنے کے ساتھ عوام کی معاشی مشکلات کم کرنے کیلئے معاشی سرگرمیوں کا فروغ بھی ضروری ھے اسی لئے پوری دنیا لاک ڈاؤن میں نرمی کی طرف بڑھ رہی ھے

ایک دم لاک ڈاؤن کرنے سے غریب طبقات کو جن مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، وہ سب کے سامنے ھے، ٹائیگر فورس کے بارے پوچھے گئے سوال پر صوبائی وزیر نے کہا کہ یہ فورس رضا کارانہ طور پر عوام کی خدمت کر رھے ہیں، انکے کردار کو سراہا جانا چاہیے، ٹائیگر فورس کی مارکیٹوں اور مساجد میں ایس اوپیز پر عملدرآمد کے حوالے سے خدمات لی جارہی ہیں اور پرائس کنٹرول کے حوالے سے بھی انکی ڈیوٹیاں لگائی جا رہی ہیں۔