پاکستان-بیلجیم اور پاکستان-یورپی یونین شراکت داری کو مزید مستحکم بنانے کی ضرورت ہے،وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی 

پاکستان-بیلجیم اور پاکستان-یورپی یونین شراکت داری کو مزید مستحکم بنانے کی ضرورت ہے،وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی 

برسلز۔ :وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ پاکستان-بیلجیئم اور پاکستان-یورپی یونین شراکت داری کو مزید مستحکم بنانے کی ضرورت ہے،پاکستان جی ایس پی پلس سے متعلق اقوام متحدہ کے 27 کنونشنز پر مکمل عملدرآمد کے لیے پرعزم ہے۔افغانستان کو انسانی بحران سے نکالنے کے لیے بین الاقوامی تعاون بہت ضروری ہے۔

یہ باتیں انہوں نے بدھ کو برسلز میں بیلجیئم کی پارلیمنٹ سے تعلق رکھنے والے اراکین پارلیمنٹ اور یورپی پارلیمنٹ کے ممبران کے وفد کے ساتھ ملاقات میں کہیں۔ملاقات کے دوران پاکستان کے بیلجیم و یورپی یونین کے ساتھ دوطرفہ تعلقات، اہم علاقائی و بین الاقوامی امور پر پیش رفت سمیت باہمی دلچسپی کے معاملات پر تبادلہ خیال ہوا۔

وزیر خارجہ نے اراکین پارلیمنٹ کو یورپی یونین اور اس کے تمام رکن ممالک کے ساتھ پاکستان کے خوشگوار اور دوستانہ تعلقات کے بارے میں آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور یورپی یونین نے جون 2019 میں اسٹریٹجک انگیجمنٹ پلان (ایس ای پی ) پر دستخط کیے،جس کے نتیجے میں دوطرفہ تعاون کو مزید مستحکم بنانے میں مدد ملی، پاکستان اور یورپی یونین کے درمیان ایسے میکانزم اور “ڈائیلاگ فریم ورک” موجود ہیں جن کے ذریعے باہمی دلچسپی کے تمام امور پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا جاتا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سرمایہ کاری، تجارتی و اقتصادی تعاون، یورپی یونین اور بیلجیم کے ساتھ پاکستان کے کثیر الجہتی تعلقات کا ایک اہم جز ہے ۔جی ایس پی پلس مشترکہ طور پر ایسا منفعت بخش اقدام رہا ہے جس نے پاکستان اور یورپی یونین کی باہمی تجارت کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ پاکستان جی ایس پی پلس سے متعلق اقوام متحدہ کے 27 کنونشنز پر مکمل عملدرآمد کے لیے پرعزم ہے۔انہوں نے کہا کہ دو طرفہ تعاون کے نئے مواقع کی فراہمی میں پارلیمان کے موثر کردار کا تذکرہ کرتے ہوئے، وزیر خارجہ نے پاکستان-بیلجیم اور پاکستان-یورپی یونین شراکت داری کو مزید مستحکم بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔