چیچہ وطنی کا جنگل ہمارے لئے ایک اثاثہ ہے جس کی حفاظت کرنا ہم سب کا فرض ہونا چاہئے ،ملک امین اسلم

چیچہ وطنی کا جنگل ہمارے لئے ایک اثاثہ ہے جس کی حفاظت کرنا ہم سب کا فرض ہونا چاہئے ،ملک امین اسلم

ساہیوال(پ ر)وفاقی وزیر موسمیاتی تبدیلی ملک امین اسلم نے چیچہ وطنی کے جنگل کو نیشنل پارک کا درجہ دینے کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ چیچہ وطنی کا جنگل ماحولیاتی تبدیلی لانے میں اہم کردار ادا کر رہا ہے ،چیچہ وطنی کا جنگل ہمارے لئے ایک اثاثہ ہے جس کی حفاظت کرنا ہم سب کا فرض ہونا چاہئے،نیشنل پارک بننے کے بعد جنگل میں ہر چیز کی حفاظت کی جائے گی ، لکڑی چوری پر بھی قابو پایا جائے گا،ماحولیاتی آلودگی انسانی بقا اور ترقی میں سب سے بڑی رکاوٹ بن چکی ہے جس سے بے وقت بارشیں ہو رہی ہیں اور موسموں کی شدت میں اضافہ ہو رہاہے -جس سے نا صرف فصلوں کی پیداوا رمتاثر ہو رہی ہے بلکہ انسان مختلف بیماریوں کا بھی شکار ہو رہے ہیں -ضرورت اس امر کی ہے کہ ماحولیاتی آلودگی کے مسئلے کی سنگینی کو سمجھا جائے اور اس کے اثرات کو کم کرنے کے لئے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھائے جائیں -وزیر اعظم پاکستان عمران خان کا بلین ٹری منصوبہ اسی سلسلے کی ایک اہم کڑی ہے جس میں عام شہریوں کی شرکت انتہائی ضروری ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاکستان تحریک انصاف کے سینئر مرکزی رہنما رائے حسن نواز خاں اور ممبر قومی اسمبلی رائے مرتضیٰ اقبال خاں ایڈووکیٹ کی دعوت پر چیچہ وطنی فاریسٹ ریسٹ ہاﺅس کا دورہ کرنے کے بعد گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر سابق ممبر قومی اسمبلی رائے عزیز اللہ خاں،اسسٹنٹ کمشنر چیچہ وطنی شاہد ندیم رانا،ڈی ایف او فیاض خاں بلوچ،ایس ڈی او جنگلات رانا قمر خاں،سابق چیئرمین بلدیہ رانا محمد اجمل خاں، راﺅ محمد اسلم ، سرپرست چیچہ وطنی پریس کلب چوہدری فیاض حسن کمبوہ، بابائے صحافت رانا عبداللطیف،حافظ ساجد محمودسمیت ٹائیگر فورس کے نوجوان بھی موجود تھے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں اب کہیں یہ احساس عام ہو رہا ہے کہ موسمیاتی تبدیلی سے رونما ہونے والے مہلک اثرات مقامی سطح تک محدود نہیں رہیں گے بلکہ یہ عالمگیر نوعیت کے بھی ہو سکتے ہیں۔ ایسے واقعات کے تسلسل کے ساتھ وقوع پزیر ہونے سے مقامی آبادیوں کے مفلوج ہوجانے کے ساتھ ساتھ دوسرے علاقے بھی ان کی زد میں آ جائیں گے۔ موسمیاتی تبدیلی و ماحولیاتی خرابی کی وجہ بننے والے عوامل پر قابو پانا ہوگا تاکہ موجودہ اور آنے والی نسلوں کے مستقبل کو ناگہانی آفات کے خطرات سے کسی حد تک محفوظ بنایا جا سکے.