آٹااور چینی کے ذخیرہ اندوزوں کیخلاف سخت کارروائی کا جائزہ لینے کیلئے اہم اجلاس

ذخیرہ اندوزی کی روک تھام کیلئے آٹا، چینی کی ملوں میں موجود سٹاکس کی فیزیکل ویریفیکیشن کا فیصلہ انتظامی افسران تصدیق شدہ رپورٹس جلد از جلد بھجوائیں، چیف سیکرٹری کا حکم تعاون نہ کرنے والی ملوں کیخلاف انسداد ذخیرہ اندوزی قانون کے تحت سخت کارروائی کی ہدایت

آٹااور چینی کے ذخیرہ اندوزوں کیخلاف سخت کارروائی کا جائزہ لینے کیلئے اہم اجلاس

آٹااور چینی کے ذخیرہ اندوزوں کیخلاف سخت کارروائی کا جائزہ لینے کیلئے صوبائی وزیر صنعت میاں اسلم اقبال اور چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک کا ایک اہم اجلاس کیمپ آفس میں منعقد ہوا۔کمشنر لاہور ڈویژن دانش افضال، سی سی پی او لاہور ذوالفقار حمید اور متعلقہ افسران نے اجلاس میں شرکت کی جبکہ ڈویژنل کمشنرز، آرپی اوز، ڈپٹی کمشنرز اور ڈی پی او اوز ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔اجلاس میں آٹا اور چینی کی ملوں میں موجود سٹاکس کی فیزیکل ویریفیکیشن اور تعاون نہ کرنے والی ملوں کیخلاف سخت کارروائی کا فیصلہ کیا گیا۔ چیف سیکرٹری نے حکم دیا کہ انتظامی افسران سٹاکس سے متعلق تصدیق شدہ رپورٹس جلد از جلد بھجوائیں۔

انہوں نے کہا کہ سٹاکس کے مطابق مارکیٹ میں سپلائی نہ کرنے والی ملوں کیخلاف انسداد ذخیرہ اندوزی قانون کے تحت کارروائی کی جائے اور ان ملوں کے سٹاکس کو ضبط کر کے اگلے 24گھنٹوں میں سرکاری نرخوں پر مارکیٹ میں فروخت کر دیا جائے۔ چیف سیکرٹری نے کہاکہ آٹے اور چینی کی سرکاری نرخوں پر فروخت یقینی بنانا ضلعی انتظامیہ کی ذمہ داری ہے، عوام کو ریلیف فراہم نہ کرنے والے انتظامی افسر کو عہدے سے ہٹا دیا جائے گا۔ اجلاس میں عید الاضحی کے سلسلے میں مویشی منڈیاں شہروں سے باہر منتقل کرنے کا فیصلہ بھی کیا گیا۔