پاکستان کسٹمز کی جانب سے کسٹمزریونیومیں اضافہ اور سمگل شدہ اشیا کے خلاف اقدامات میں بھی نمایاں تیزی

پاکستان کسٹمز کی جانب سے کسٹمزریونیومیں اضافہ اور سمگل شدہ اشیا کے خلاف اقدامات میں بھی نمایاں تیزی

اسلام آباد :پاکستان کسٹمز کی جانب سے کسٹمزریونیومیں اضافہ کیلئے اقدامات کاسلسلہ جاری ہے جبکہ سمگل شدہ اشیا کے خلاف اقدامات میں بھی نمایاں تیزی آئی ہے۔

ترجمان ایف بی آر نے اے پی پی کوبتایاکہ کسٹمز ریونیومیں اضافہ کیلئے اقدامات کے بہترنتایج سامنے آرہے ہیں۔ پاکستان کسٹمز نے رواں مالی سال کے پہلے گیارہ ماہ میں 672 ارب روپے کی کسٹمز ڈیوٹی حاصل کی جبکہ مقرر کردہ ہدف 565 ارب روپے تھا، جاری مالی سال کے پہلے 11 ماہ میں ہدف سے 107 ارب روپے یا 19 فیصد زائد ریونیوحاصل ہواہے ۔مئی 2021 میں 64ارب روپے کی کسٹمز ڈیوٹی حاصل ہوئی جبکہ مقرر کردہ ہدف 57 ارب روپے تھا۔ اس طرح ماہانہ بنیادوں پر 12 فیصد زائد کسٹمز ڈیوٹی حاصل ہوئی۔ترجمان نے بتایا کہ سمگلنگ کے خلاف اقدامات کے بھی بہترنتائج سامنے آرہے ہیں۔ مئی کے مہینہ میں 2.6 ارب روپے کی سمگل شدہ اشیا ضبط کی گئی جوگزشتہ سال مئی کے مقابلہ میں 74 فیصدزیادہ ہے، گزشتہ سال مئی میں 1.5 ارب روپے کی اشیا ضبط کی گئی تھی ۔ مالی سال کے پہلے گیارہ ماہ میں ضبط شدہ اشیا کے حجم میں 29 فیصدکااضافہ ہواہے۔ جولائی سے لیکرمئی تک کی مدت میں 52.5 ارب روپے کی سمگل شدہ اشیا ضبط کی گئی جو کہ پچھلے سال 40.8 ارب روپے تھی ۔

ترجمان نے بتایا کہ ان لینڈ ریونیو اور کسٹمز کی طرف سے لئے گئے موثر انفورسمنٹ اقدامات کے باعث رواں مالی سال 175 ارب روپے کا اضافی ریوینیو حاصل ہوا ہے۔175 ارب روپے کے اضافی ریونیو میں ان لینڈ ریونیو نے تقریبا 100 ارب روپے حاصل کئے ہیں۔ ان انفورسمنٹ اقدامات میں بقایا جات کے علاوہ حاصل ہونے والی ریکوری، موثر آڈٹ، سیلز ٹیکس کی بہترین مانیٹرنگ، پی او ایس کے ساتھ منسلک ریٹیلرز، ٹیکس نیٹ کا پھیلاو اور ودہولڈنگ ٹیکسز کی موثر مانیٹرنگ شامل ہے۔اسی طرح پاکستان کسٹمز کی طرف سے بھی موثر انفورسمنٹ اور انتظامی اقدامات کے باعث رواں مالی سال 75 ارب روپے کا اضافی ریونیو حاصل ہوا ۔ ان اقدامات میں چائے، ٹائرز ، ٹیکسٹائل، الیکٹرونکس ، پام آئل اور پٹرولیم مصنوعات کے خلاف اینٹی سمگلنگ آپریشنز شامل ہیں