حکومت پنجاب نے محکمہ او قاف کا قیام وقف املاک کو محکمانہ تحویل میں لینے کے لئے قائم کیا

ما ضی میں تمام درباروں اور اس سے منسلک اراضی کی آمد ن کو متولی یا سجادہ نشین اپنی ذاتی جائیداد سمجھ کر استعمال میں نہ لاتے رہے مدرسہ محمودیہ تونسہ شریف کے متولی خواجہ نصر المحمودغلط بیا نیوں کی بنا پر کسی بھی فورم پرمدرسہ او ر اس سے منسلک جائیداد کو ذاتی یا غیر وقف ثابت نہ کر سکا

حکومت پنجاب نے محکمہ او قاف کا قیام وقف املاک کو محکمانہ تحویل میں لینے کے لئے قائم کیا

لاہور : حکومت پنجاب نے محکمہ او قاف کا قیام وقف املاک کو محکمانہ تحویل میں لینے کے لئے قائم کیا تاکہ تمام درباروں اور اس سے منسلک اراضی کی آمد ن کو متولی یا سجادہ نشین اپنی ذاتی جائیداد سمجھ کر استعمال میں نہ لاتے رہیں۔مدرسہ محمودیہ تونسہ شریف کے متولی خواجہ نصر المحمود کی ہٹ د ھر می، اجارہ داری،حیل و حجت،بہانہ سازیوں اور غلط بیا نیوں کی بنا پر کسی بھی فورم پرمدرسہ او ر اس سے منسلک جائیداد کو ذاتی یا غیر وقف ثابت نہ کر سکا۔ مدرسہ اور اس سے منسلک جائیداد کو وقف فی سبیل للہ ہونے کی بنا پر مذید کسی بھی مالی نقصان سے بچانے کے مد نظر قانونی طور پربذریعہ نو ٹیفیکیشن مخکمانہ تحویل میں لے لی گئی ہے۔

تفصیل کے مطابق 2013ء کو وزیر اعلیٰ سیکر ٹریٹ کی طرف مد رسہ محمودیہ تونسہ شریف کے متولی خواجہ نصر المحمود کی بابت شکایت پر کاروائی کرتے ہوئے متولی نے سیکر ٹری اوقا ف کے روبرو بیان دیا کہ1929ء میں میاں محمود ولد اللہ بخش نے زبانی ہبہ کے ذریعے اپنی جائیداد مدر سہ کے نام ٹرانسفر کی۔ محکمہ کے لیگل ایڈوائز نے وقف پراپر ٹیز آر ڈیننس کے سیکشن7کے تحت محکمانہ تحویل میں نہ لینے کا مشورہ دیا۔جس پر وزیر اعلیٰ سیکر ٹریٹ کو باقاعدہ آگاہ کیا گیا۔متولی مدرسہ نے 2019ء میں آڈ ٹ کے بغیرر جسٹرار جوائنٹ سٹاک کمپنی ڈیرہ غازی خان سے رجسٹریشن اور پنجاب ایجو کیشن فاؤ نڈ یشن سے سالانہ گرانٹ وصولی کے کا غذات سیکر ٹری اوقاف کو مو صول ہوئے۔جس پرمتولی کو اخراجات کی جانچ پڑتال کے لئے نو ٹس جای کیا گیا۔

جس پر متولی نے حیل و حجت کا مظاہرہ کرتے ہو ئے ملک سے  باہرہونے کا کہا،عرصہ تین سال بعدبغیر کسی ریکارڈ کے حاضر ہوا۔اسی دوران متولی نے عدالت سے حکم امتناعی حاصل کیا۔عدالت نے رٹ پٹیشن کو خارج کرتے ہوئے سیکر ٹری کو ہدایت کی کہ وہ قانونی سوالات کے تحت کاروائی کریں۔اسی دوران مختلف مواقع پر متولی عدالت میں پٹیشن دائر کرتا رہا۔14جنوری 2020ء کو تفصیلی فیصلہ پر مدرسہ محمودیہ وقف فی سبیل للہ ثابت ہوئی۔جس پر متولی نے دوبارہ کسی قسم کا اعتراض عدالت میں جمع نہ کرایا۔جس پر منیجر اوقاف ڈیرہ غازی خان نے اپنا فیصلہ جاری کرتے ہوئے اطلاع کاپی متولی اور رجسٹرار ہائیکورٹ ارسال کی۔