مذہبی اقلیتوں کے عالمی دن کی مناسبت سے گورنر ہاﺅس لاہور میں پروقار تقریب کا انعقاد , 11اگست کا دن ہمیں عظیم لیڈرقائد اعظم کی تاریخی تقریر یاد دلاتا ہے:صوبائی وزیر اقلیتی امور 

تقریب میں صوبائی وزیر اعجاز عالم آگسٹین سمیت متعدد ممبران پنجاب اسمبلی کی خصوصی شرکت ,  مذہبی اقلیتوں کے تحفظ کےلئے تمام ممکنہ اقدامات یقینی بنائے جا رہے ہیں: اعجاز عالم آگسٹین 

مذہبی اقلیتوں کے عالمی دن کی مناسبت سے گورنر ہاﺅس لاہور میں پروقار تقریب کا انعقاد , 11اگست کا دن ہمیں عظیم لیڈرقائد اعظم کی تاریخی تقریر یاد دلاتا ہے:صوبائی وزیر اقلیتی امور 

لاہور:  محکمہ انسانی حقوق واقلیتی امور پنجاب کی جانب سے مذہبی اقلیتوں کے عالمی دن کے حوالے سے گورنر ہاﺅس لاہور میں ایک پروقا رتقریب کا انعقاد کیا گیا۔ تقریب میں صوبائی وزیر انسانی حقوق واقلیتی امور اعجاز عالم آگسٹین، ایم پی اے/پارلیمانی سیکرٹری انسانی حقوق واقلیتی امور منہدر پال سنگھ، ایم پی اے ہارون گل، ایم پی اے پیٹر گل سمیت تحریک انصاف کے سینئر رہنماﺅں اور مذہبی اقلیتوں سے تعلق رکھنے والی نامور شخصیات نے کثیر تعداد میں شرکت کی ۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر اعجاز عالم آگسٹین نے کہا کہ آج کا دن منانے کا مقصد 11 اگست 1947 کو قائداعظم کی وہ تقریر کے الفاط یاد کرنا ہے ۔

جس میں انہوں نے کہا تھا کہ آپ آزاد ہیں اپنے مندروں میں جانے کے لئے؛ آپ اس ریاست پاکستان میں اپنی مساجد یا کسی اور عبادت گاہ میں جانے کے لئے مکمل آزاد ہیں جبکہ تحریک انصاف کے دور حکومت میں مذہبی اقلیتوں کے تمام عالمی دن پورے جوش و خروش سے منائے جا رہے ہیں جو کہ ماضی میں بالکل دیکھنے کو نہیں ملتا تھا اور اسی لئے مذہبی اقلیتوں میں احساس محرومی بڑھ رہا تھا تاہم تحریک انصاف کی دو سالہ حکومت میں مذہبی اقلیتوں کو ان تمام حقوق کی فراہمی یقینی بنائی گئی ہے جو آئین پاکستان کے تحت تمام شہریوں کے مساوی حقوق کی نمائندگی کرتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ پاکستان کی تاریخ میں پہلی مرتبہ کرسمس کو بھی سرکاری سطح پر منایا گیا ۔

جبکہ مذہبی اقلیتوں کے رہائشی علاقوں،عبادت گاہوںاور قبرستانوں کے تحفظ،بہتری اور شہری سہولیات کی فراہمی کےلئے MDFمیناورٹی ڈیویلپمنٹ فنڈ کو موثر طور پر خرچ کرنے کےلئے اقدامات کئے گئے ہیں۔ صوبائی وزیر نے مزید کہا کہ اس کے علاوہ مذہبی اقلیتوں کے مسائل کے حل کے لئے شادی بیاہ و طلاق کے قوانین کو تبدیل و بہتر کرنے کے لیے تیزی سے کام جا ری ہے۔ٹور ازم کے حوالے سے لاہور مال روڈ پر موجود دونوں گرجا گھروں اور ٹیکسلا میں گرجا گھر کو منتخب کیا ہے تاکہ ان کو اسٹیٹ آف دی آرٹ بنایا جائے اور سیاحت کے فروغ میں بھی شامل کیا جا سکے جبکہ ان کے علاوہ یہ بھی طے کیا جا چکا ہے کہ بالخصوص جنوبی پنجاب میں ہر سال 02ماڈل ویلیج بنائے جائیں گےاور اقلیتی بے روزگار خاندانوں کو 05 لاکھ فی کس کے حساب سے امداد فراہم کی جائے گی تاکہ ان خاندانوں کی کفالت بھی بہترین انداز میں کی جا سکے ۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے دیگر مقررین نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ جب سے تحریک انصاف کی حکومت اقتدار میں آئی ہے تب سے مذہبی اقلیتیں مکمل آزادی کے ساتھ اپنے تہوار سرکاری سطح پر منارہی ہے جبکہ پاکستانی تاریخ میں پہلی مرتبہ خود وزیراعظم پاکستان،وزیراعلیٰ پنجا ب اور گورنر پنجاب نے مذہبی اقلیتوں کے ساتھ ملکر تمام تہوار منائے ہیں جو کہ انقلابی تبدیلیو ں کا باعث بن رہی ہیں ۔تقریب میں سیکرٹری انسانی حقوق واقلیتی امور دیگرافسران کے ہمراہ مذہبی اقلیتوں سے وابستہ افراد بھی کثیر تعداد میں موجود تھے۔