میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے بورڈ کا 113واں اجلاس

میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے بورڈ کا 113واں اجلاس

لاہور : صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال کی زیر صدارت پنجاب سمال انڈسٹریز کارپوریشن کے بورڈ کا 113واں اجلاس منعقد ہوا۔پیسک کے کمیٹی روم میں ہونے والے اجلاس میں سمال انڈسٹریل اسٹیٹس کی کالونائزیش کے عمل کو تیز کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔اجلاس میں وزیر اعلیٰ خود روز گار سکیم کے امور، پنجاب روزگار سکیم اور کاٹیج انڈسٹری کی بحالی کے پروگرام پر پیش رفت کا جائزہ بھی لیا گیا۔ بورڈ نے فنانشل سپورٹ فارکاٹیج انڈسٹری اینڈ کلسٹر ڈویلپمنٹ پراجیکٹ کے تحت نئے اضلاع شامل کرنے اور نئے کلسٹر بنانے کی منظوری دی۔کرونا وبا کے پیش نظر سمال انڈسٹریل اسٹیٹس میں کالونائزیش کے عمل کو تیز کرنے کے لئے پلاٹ آلاٹیز کے لئے مراعاتی پیکج پر غور ہوا۔ ڈائریکٹر بورڈ ریاض حمید چوہدری کی سربراہی میں قائم ذیلی کمیٹی مراعاتی پیکج کے حوالے سے سفارشات مرتب کرکے آئندہ اجلاس میں پیش کرے گی۔

محکمانہ اپیلوں کامعاملہ ایڈیشنل سیکرٹری صنعت و تجارت کے سپرد کر دیا گیا جبکہ پیسک میں خالی آسامیوں پر بھرتی اور کمیوٹیڈپورشن آف پنشن کی بحالی کا معاملہ موخر کردیا گیا۔ صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نے کاٹیج انڈسٹری  بحالی کی سکیم کی سست روی پرسخت  ناراضگی کا اظہار کیا اور سکیم پر عملدرآمد کے حوالے سے ہدایات پر عمل نہ کرنے والے افسران و اہلکاران کے خلاف کاروائی کا حکم دیا۔ انہوں نے کہا کہ میں کام پر یقین رکھتا ہوں۔ جو کام کرے گا، وہی ادارے میں رہے گا۔

صوبائی وزیر صنعت و تجارت میاں اسلم اقبال نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ صنعتکاری کے عمل کو تیز کرکے ہی غربت اور بے روزگاری کے مسئلے پر قابو پایا جاسکتا ہے۔انڈسٹریل اسٹیٹس کی سو فیصد کالونائزیش ہماری پالیسی ہے، انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کی ٹھوس معاشی پالیسیوں کے باعث ملک میں نئی سرمایہ کاری آئی ہے اور انڈسٹریل اسٹیٹس میں نئے لگنے والے مختلف صنعتی یونٹس نے پیدا وار شروع کر دی ہے۔منیجنگ ڈائریکٹر پیسک جمیل احمدجمیل، ایڈیشنل سیکرٹری صنعت و تجارت اور پیسک کے بورڈ ممبران نے اجلاس میں شرکت کی۔