ماہرین فلکیات نت نئی تحقیقات

یہ جہاز نظام ِشمسی سے باہر جانےوالے پہلے خلائی جہاز بن گئے ہیں سورج کے احاطے سے بہت دور ہمارے نظام شمسی کا سرا بظاہر ایک ٹھنڈی اور تاریکی جگہ سمجھی جاتی تھی

ماہرین فلکیات نت نئی تحقیقات

ماہرین فلکیات نت نئی تحقیقات کرکے خلاء میں پوشیدہ چیزوں اور نئی در یافتوں کے بارے میں لوگوں کو آگاہ کررہے ہیں ۔اس سلسلے کو جاری رکھتے ہوئے ماہرین نے خلا میںدو جہاز روانہ کیے ہیں ۔یہ جہاز نظام ِشمسی سے باہر جانےوالے پہلے خلائی جہاز بن گئے ہیں ۔سورج کے احاطے سے بہت دور ہمارے نظام شمسی کا سرا بظاہر ایک ٹھنڈی اور تاریکی جگہ سمجھی جاتی تھی ۔کچھ عر صے تک اس کا نظارہ دور سے ہی کیا جاتا تھا ۔ ماہرین فلکیات نےاس کی جانب اپنی توجہ مبذول نہیں کروائی تھی ۔بلکہ ماہرین دور بینیں ،ہمسایہ ستاروں،کہکشائوں اور نیبولا ستاروں کی جھرمٹ میں چمکتے ہوئے مادّے کی طر ف رکھتے تھے ۔لیکن 1970 ء میں بنائے اور لانچ کیے ہوئے خلائی جہاز انٹر اسٹیلر اسپیس (ستاروں کے درمیان واقع خلا ) کی جھلکیاں دکھا رہے ہیں ۔ جتنا لمبا سفر یہ جہاز کریں گے اتنا لمبا سفر ابھی تک کسی جہاز نے نہیں کیا ہے ۔ 

ماہرین کے مطابق اس جہاز نے جو راز افشا ں کیا ہے وہ اس سے قبل کسی جہاز نے نہیں کیا تھا ۔نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی یونیورسٹی آف کینٹری بری کے ماہر فلکیات مشیل بینسٹر کا کہنا ہے کہ جب ہم الیکٹر ومیگنیٹک اسپیکٹرم کے مختلف حصے دیکھتے ہیں تووہاں خلا کی جگہ اس تاریکی سے بہت مختلف ہے ،جس کا ادراک ہم خود بھی کرتے ہیں ۔مشیل نظام شمسی کے بیرونی پھیلائو کا مطالعہ کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ مقناطیسی فیلڈ ایک دوسرے سے لڑتی ہیں ،ایک دوسری کو دھکیلتی ہیں اور یہ ایک دوسرے کے ساتھ جڑی ہوئی ہیں ۔

ادھر ادھر ہلتے ہوئے پانی کے بجائے یہاں ہلچل شمسی ہوائوں کا نتیجہ ہے جو کہ ایک چارجڈ ذرات کی طاقتور جوچھاڑ یا پلازمہ کا متواتر چھڑکائو ہے جو سورج کی ہرسمت کی طرف اس وقت نکلتا ہے جب یہ پلازمہ گیسوں کی کاکٹیل، خلائی مٹی اور کائناتی شعاؤں سے ٹکراتا ہے، جو ستاروں کے نظاموں کے درمیان اڑتی رہتی ہیں اور اسے’’ انٹراسٹیلر میڈیم‘‘ کہا جاتا ہے۔سائنس داں گزشتہ کئی سالوں سے ریڈیو اور ایکسرے ٹیلیسکوپس کی مدد سے یہ جاننے کی کوشش کررہے ہیں کہ انٹر اسٹیلر میڈیم کس چیز سے بنا ہے ۔

انہوں نے یہ انکشاف کیا ہے کہ یہ بہت ہی زیادہ منتشر آئیو نائزڈ ہائیڈروجن ایٹمز ،مٹی کا کائناتی شعاعوں سے مل کر بنا ہے جو گیس کے گہرے مالیکیو لر بادلوں کے درمیان ہیں اور خیال کیا جارہا ہے کہ یہی وہ جگہ ہے جہاں نئے ستارے جنم لیتے ہیں ۔لیکن ہمارے نظام شمسی سے باہر اس کی اصل حالت کیسی ہے یہ بات ابھی ایک تک رازہے،جب سورج اور اس کے گرد ونواح کے سیارے کہکشاں سے گزرتے ہیں تو یہ بلبلہ انٹراسٹیلر میڈیم سے ایک نہ نظر آنے والی شیلڈ کی طرح مسلسل ٹکراتا ہے، جس کی وجہ سے مضر کائناتی کرنوں کی ایک بڑی تعداد اور دیگر مادّہ باہر ہی رہتا ہے۔

یہ جاننا بھی مشکل ہے کہ اس کا حجم اور شکل کیسی ہے۔ اگر اس کا موازنہ ملکی وے یا ستاروں کی طویل کہکشاؤں کے ساتھ کیا جائے تو ہمارا نظامِ شمسی بحر الکاہل میں ایک چاول کے دانے سے بھی چھوٹا لگتا ہے۔ لیکن پھر بھی ہیلیو سفیئر کا بیرونی کنارا اتنا دور ہے کہ وائجر 1 اور وائجر 2 خلائی جہازوں کو زمین سے وہاں تک پہنچنے میں 40 سال لگے ۔وائجر 1 نے وائجر 2 کے مقابلے میں نظام شمسی کے درمیان سے زیادہ براہ راست راستہ اختیار کیا تھا ۔2012 ء میں وائجر 1 اور 2018 ء میں وائجر 2 انٹر اسٹیلراسپیس میں داخل ہو اتھا ۔دونوں اس وقت زمین سے تقریباً 13 ارب اور 11 ارب میل دور ہیں ۔

اس دوران وہ زیادہ ڈیٹا بھیج رہے ہیں ۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ ان خلائی جہازوں نے ہمیں ہیلیو سفیئر اور انٹر اسٹیلر میڈیم کے درمیان کی سر حد کے متعلق بہت کچھ بتا یا ہے ۔اس سے ماہرین کو یہ معلوم ہوا ہے کہ ہمارانظام شمسی کس طر ح وجود میں آیا تھا اور زندگی زمین پر کیسے ممکن ہو ئی تھی ۔نظام شمسی کا کنا را طوفانی مقناطیسی فیلڈز کو کبھی ہوائوں کا طوفان،انتہائی طاقت والے مادّے کا طوفان ور ہر طرف سے آتی ہوئی تابکاری پیدا کرتا ہے ۔جیسے ہی سورج کی آئوٹ پٹ یا پیداوار میں تبدیلی آتی ہے، یا ہم انٹرسٹیلر میڈیم کے مختلف علاقوں سے گذرتے ہیں تو ہیلیو سفیئر کے بلبلے کا حجم اور شکل بدلنا شروع ہو جاتی ہے۔ 

جب شمسی ہوائیں تیز یا کم ہوتی ہیں، تو وہ بلبلے کے خارجی دباؤ کو بھی بدل دیتی ہے۔ ماہرین کےمطابق2014 میں سورج میں سرگرمی بڑھ گئی تھی، جس سے اس نے خلا میں شمسی ہواؤں کا ایک طوفان سا بھیجنا شروع کیا تھا۔ اس طوفان نے فوراً مرکری اور وینس کو شعاؤں سے نہلا دیا تھا جو کہ 800 کلو میٹر فی سیکنڈ کی رفتار سے چل رہی تھیں۔دو دن اور 150 ملین کلومیٹر طے کرنے کے بعد اس نے زمین کو بھی اپنے گھیرے میں لیا۔ خوش قسمتی سے ہمارے سیارے کی مقناطیسی فیلڈ نے ہمیں اس طاقتور اور خطرناک تابکاری سے محفوظ رکھا۔

یہ طوفان ایک دن کے بعد مریخ سے گزرا اور اسٹرؤیڈ بیلٹ سے ہوتا ہوا دور افتادہ گیسوں کے پہاڑ نما سیاروں مشتری، زحل اور یورینس سے گزرا اور دو ماہ کے بعد نیپچون پہنچا جو کہ سورج سے تقریباً 4.5 کلو میٹر دور ہو کر بھی اس کے مدار میں چکر لگاتا ہے۔چھ ماہ کے بعد یہ ہوائیں بالآخر سورج سے 13 ارب کلو میٹر دور پہنچیں۔ اس جگہ کو ’’ٹرمینیشن شاک‘‘ کہا جاتا ہے۔ یہاں سورج کی مقناطیسی فیلڈ، جو کہ شمسی ہوا کو دھکیلتی ہیں، اتنی دھیمی پڑ جاتی ہے کہ انٹراسٹیلر میڈیم اسے اس کو مخالف سمت میں دھکیل سکتا ہے۔

شمسی ہوا کا پھیلاؤ وائجر 2 سے اس وقت ٹکرایا جب وہ نظامِ شمسی کے اندر ہی تھا۔ تقریباً ایک سال بعد، اس ہوا کے آخری جھونکے وائجر 1 تک پہنچے، جو کہ 2012 میں انٹراسٹیلرا سپیس میں داخل ہو چکا تھا۔دونوں خلائی جہازوں نے مختلف روٹ اختیار کیے ہیں، جس کا مطلب ہے کہ ایک جہاز شمسی سطح سے 30 ڈگری اوپر ہے جب کہ دوسرا اتنا ہی نیچے۔ شمسی ہوا کا جھونکا ان تک مختلف علاقوں اور مختلف اوقات میں پہنچا، جس کی وجہ سے ہیلیوپاز کی فطرت کے متعلق نہایت مفید سراغ ملے۔ایک رپورٹ کے مطابق یہ ہنگامہ خیز باؤنڈری لاکھوں کلومیٹر چوڑی ہے اور یہ ہیلیو سفیئر کے سطح کے گرد اربوں مربع کلومیٹر پر محیط ہے۔

پروورنیکوا کا کہنا ہے کہ وائجرز کے اندازوں کے مطابق ہیلیو پاز تقریباً ایک آسٹرونومیکل یونٹ موٹا ہے (جو کہ اوسطاً زمین سے سورج کا فاصلہ ہے)۔نہ صرف اس باؤنڈری والے علاقے میں شمسی اور انٹراسٹیلر ہوائیں ہنگامہ خیز رسی کشی کا سماں پیدا کرتی ہیں، لیکن ذرات چارجز اور رفتار بھی بدلتے نظر آتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں انٹرسٹیلر میڈیم کا ایک حصہ شمی ہوا میں تبدیل ہو جاتا ہے، اور حقیقت میں بلبلے کے باہر کی طرف دھکا دینے کے عمل میں اضافہ کرتا ہے۔