کراچی سرکلر ریلوے، 20 دن میں اخراجات1 کروڑ، آمدن 4 لاکھ

20 نومبر تا 10 دسمبر ریلوے کے یومیہ 5 لاکھ روپے سے زائد خرچ ہو رہے ہیں دستاویزات کے مطابق سٹی اسٹیشن سے صبح چلنے والی سرکلر ٹرین میں صرف 30 سے 50 مسافر سفر کرتے ہیں، جبکہ دھابیجی تا سٹی اسٹیشن ٹرین میں 80 سے 150 مسافر سفر کرتے ہیں

کراچی سرکلر ریلوے، 20 دن میں اخراجات1 کروڑ، آمدن 4 لاکھ

کراچی میں گزشتہ ماہ سے دوبارہ چلنے والی سرکلر ٹرین محکمۂ ریلوے کے لیے سفید ہاتھی بن گئی ہے۔ ریلوے کے ذرائع کے مطابق سرکلر ریلوے کی مد میں گزشتہ 20 دنوں میں 1 کروڑ روپے کے اخراجات ہوئے ہیں جبکہ اس سے آمدن 4 لاکھ روپے ہو سکی ہے۔ ریلوے ذرائع کا کہنا ہے کہ 20 نومبر تا 10 دسمبر ریلوے کے یومیہ 5 لاکھ روپے سے زائد خرچ ہو رہے ہیں۔ دستاویزات کے مطابق سٹی اسٹیشن سے صبح چلنے والی سرکلر ٹرین میں صرف 30 سے 50 مسافر سفر کرتے ہیں، جبکہ دھابیجی تا سٹی اسٹیشن ٹرین میں 80 سے 150 مسافر سفر کرتے ہیں۔

10 دسمبر کو صبح سٹی اسٹیشن تا دھابیجی سرکلر ٹرین میں صرف 55 مسافر سوار تھے، جمعرات کو دھابجی تا سٹی اسٹیشن 110 مسافروں نے سفر کیا، جس کی 3300 روپے آمدنی ہوئی۔ ریلوے حکام کے مطابق کراچی سرکلر ٹرین میں بیک وقت 500 مسافر سفر کر سکتے ہیں۔ ذرائع نے مزید بتایا کہ سرکلر ریلوے میں چلنے والے انجن، ڈیزل، پاور وین کا یومیہ خرچہ ڈھائی لاکھ روپے ہے۔ محکمۂ ریلوے کے ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ سر کلر ٹرین کا مرمت کا یومیہ خرچہ 2 لاکھ روپے سے زائد ہے۔