مولانا عادل  خان کے قاتل گرفتار کیئے جائیں: چیئرمین مرکزی علماء کونسل پاکستان صاحبزادہ زاہد محمود قاسمی

مرکزی علماء کونسل پاکستان مولانا عادل خان اور ان کے ساتھی کے قتل کی شدید مذمت کرتی ہے۔ایک جید ؑعالم دین کے قتل پر اظہار افسوس کرتے ہیں: وائس چیئرمین مولانا عبدالمنان عثمانی،وائس چیئرمین صاحبزادہ خالد محمود قاسمی، مرکزی سیکرٹری جنرل مولانا شاہ نواز فاروقی،مولانا شبیر احمد عثمانی

 مولانا عادل  خان کے قاتل گرفتار کیئے جائیں: چیئرمین مرکزی علماء کونسل پاکستان صاحبزادہ زاہد محمود قاسمی

 مولانا عادل  خان کے قاتل گرفتار کیئے جائیں۔ حکومت علماء کرام کو تحفظ فراہم کرے۔حکومتی حلقوں میں اگر اس بات کا علم تھا کہ ایک ہمسایہ ملک علماء کوقتل کرکے ملک میں اتشار پھیلانے کی کوشش کررہا ہے تو پیشگی اس کے تدارک کے لئیے حفاظتی اقدامات کیوں نہیں اٹھائے گئے۔ مرکزی علماء کونسل پاکستان مولانا عادل خان اور ان کے ساتھی کے قتل کی شدید مذمت کرتی ہے۔ایک جید ؑعالم دین کے قتل پر اظہار افسوس کرتے ہیں۔

چیئرمین مرکزی علماء کونسل پاکستان صاحبزادہ زاہد محمود قاسمی، وائس چیئرمین مولانا عبدالمنان عثمانی،وائس چیئرمین صاحبزادہ خالد محمود قاسمی، مرکزی سیکرٹری جنرل مولانا شاہ نواز فاروقی،مولانا شبیر احمد عثمانی،ڈپٹی سیکرٹری حافظ محمد امجد،صوبائی صدر مولانا قاری مشتاق لاہوری،جنرل سیکرٹری پنجاب حافظ مقبول احمد نے اپنے مشترکہ بیان میں مولانا عادل خان کے قتل کی مذمت کی ہے اور اس پرافسوس کا اظہار کیاہے کہ اگر شیخ رشید اور حکومتی حلقوں میں اس بات کا علم تھا کہ ایک ہمسایہ ملک پاکستان میں کوشش کررہا ہے کہ علماء کو قتل کرکہ ملک میں انتشار پیدا کیا جائے تو ہمارا حکومتی حلقوں سے سوال ہے کہ اس اطلاع پر پیشگی اور حفاظتی اقدامات کیوں نہیں اٹھائے گئے؟ مولانا عادل خان اور تحریک تحفظ ناموس صحابہ و اہل بیت کے قائدین نے ہمیشہ قانون کا احترام کیااور لاکھوں کے اجتماعات کو پر امن رکھا۔

صرف حکومت سے ایک ہی مطالبہ کیا کہ اصحاب رسولﷺ و اہل بیت اور اسلام کی مقدس شخصیات کی توہین کرنے والوں کے خلاف موشر قانون سازی کی جائے اسلام کی بنیادی شخصیات کے تحفظ کے لیئے اٹھائی جانے والی آواز کو دبایا گیا ہے اور جو لوگ اس ملک میں انتشار پیدا کررہے ہیں اور علماء کوقتل کررہے ہیں وہ مجرم دندناتے پھر رہے ہیں مرکزی علماء کونسل پاکستان وطن عزیز کو مستحکم اور خوشحال دیکھنا چاہتی ہے اور فرقہ ورانہ تشدد کا خاتمہ چاہتی ہے مگر افسوس اس ملک میں اعتدال پسند طبقے کو بھی نشانہ بنایا جا رہا ہے ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مولانا عادل خان اور ان کے رفقاء کے قاتلوں کوفوری گرفتار کرکے کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔