محکمہ ایجوکیشن کے سینئر افسر کی جنسی ہراسانی پر تنزلی

خاتون محتسب پنجاب میں تفصیلی کارروائی کے بعد فریقین کے موقف گواہان کے بیانات اور دیگر شواہد کو مد نظر رکھتے ہوئے الزامات ثابت ہونے پر مذکورہ افسر کے خلاف تنزلی کا حکم سنایا

محکمہ ایجوکیشن کے سینئر افسر کی جنسی ہراسانی پر تنزلی

لاہور: خاتون محتسب کو دی گئی تحریری شکایت میں مدعیہ نے الزامات لگائے کہ اس کے سینئر افسر نے اس کیلئے نازیبا زبان استعمال کی اور شکایت کرنے پر تادیبی کارروائی عمل میں لاتے ہوئے اسے دباؤ میں لانے کی کوشش کی خاتون افسر کا کہنا تھا کہ ملزم اسے رات گئے ان کاموں کے لیے بیٹھنے پر مجبور کرتا تھا جو کہ اس کی ذمہ داریوں میں شامل نہ تھے خاتون افسر نے جو واقعہ بارے افسران بالا کو آگاہ کرنے کی کوشش کی تو ملزم نے اپنی اتھارٹی کا نا جائز استعمال کرتے ہوئے مدعیہ کو جھوٹی شکایات اور انکوائری میں پھنسانے کی کوشش کی۔ شکایت موصول ہونے پر خاتون محتسب نے فوری کارروائی کرتے ہوئے فریقین اور گواہان کا موقف سنا۔ موقع پر موجود گواہان نے مدعیہ کے الزمات کی تائید کی۔

خاتون محتسب پنجاب میں تفصیلی کارروائی کے بعد فریقین کے موقف گواہان کے بیانات اور دیگر شواہد کو مد نظر رکھتے ہوئے الزامات ثابت ہونے پر مذکورہ افسر کے خلاف تنزلی کا حکم سنایا۔ خاتون محتسب پنجاب نے کہا کہ ایک افسر کا سینئر خاتون افسر کے لیے اس طرح کی گھٹیا زبان استعمال کرنا ناقابل معافی عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ خواتین کے تحفظ کے لئے مختلف محکموں میں آگہی مہم چلائی جانی چاہیے تاکہ ایسی کسی بھی صورتحال سے نمٹنے کے لیے وہ خاتون محتسب پنجاب سے رابطہ کر سکیں۔ پاکستانی معیشت میں خواتین کا کردار نہایت اہم ہے۔ خواتین کے لیے محفوظ کام کی جگہ کا ہونا ان کا بنیادی حق ہے۔ اور ان کے فرض کی راہ میں رکاوٹ بننے والے شرپسند عناصر کڑی سے کڑی سزا کے مستحق ہیں۔