پائیدار ترقی اور بڑھوتری کے اہداف میں نجی شعبہ اور غیر منافع بخش اداروں کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے، شوکت ترین

 مشیر برائے خزانہ شوکت ترین کا پی سی پی کے زیر اہتمام 14ویں کارپوریٹ فلنتھراپی ایوارڈ تقریب سے خطاب

پائیدار ترقی اور بڑھوتری کے اہداف میں نجی شعبہ اور غیر منافع بخش اداروں کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے، شوکت ترین

اسلام آباد:.وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ و محصولات شوکت ترین نے کہا ہے کہ پائیدار ترقی اور بڑھوتری کے اہداف میں حکومت کے ساتھ ساتھ نجی شعبہ اور غیر منافع بخش اداروں کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے، حکومت نے وسائل اور ترقی کے ثمرات نچلی سطح پر پہنچانے پر اپنی توجہ مرکوز کی ہے، کامیاب پاکستان پروگرام کے تحت آئندہ چار برسوں میں 1.4 ٹریلین روپے خرچ کئے جائیں گے۔

منگل کو یہاں پاکستان سنٹر برائے فلنتھراپی (پی سی پی) کے زیر اہتمام 14ویں کارپوریٹ فلنتھراپی ایوارڈ 2019-20ء کے موقع پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے مشیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ پائیدار ترقی اور بڑھوتری کے اہداف میں حکومت کے ساتھ ساتھ نجی شعبہ اور غیر منافع بخش اداروں کو اپنا کردار ادا کرنا چاہئے کیونکہ حکومت کے پاس وسائل اتنے نہیں ہوتے، یہ بات خوش آئند ہے کہ پاکستان میں خیرات و عطیات دینے کے رجحان میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے جس سے ملک میں غربت کے خاتمہ کیلئے کوششوں میں مدد ملے گی۔

مشیر خزانہ نے کہا کہ موجودہ حکومت نے غربت کے خاتمہ اور پائیدار ترقی کیلئے جامع اور پائیدار گروتھ کی پالیسی اپنائی ہے جس میں معاشرے کے بالخصوص معاشی طور پر پسماندہ اور غریب طبقات پر توجہ مرکوز کی گئی ہے، ماضی میں ٹریکل ڈائون کی پالیسیاں کامیاب ثابت نہیں ہوئی ہیں جس کے تناظر میں حکومت نے وسائل اور ترقی کے ثمرات نچلی سطح پر پہنچانے پر اپنی توجہ مرکوز کی، حکومتی اقدامات کے نتیجہ میں رواں سال اقتصادی اہداف حاصل کریں گے۔