لاہور میں سٹیٹ آف دی آرٹ میڈیکل لیب رواں مالی سال میں مکمل ہو گی، صوبائی وزیر

صوبائی وزیر محنت و انسانی وسائل انصر مجید خان کی زیر صدارت اہم اجلاس

 لاہور میں سٹیٹ آف دی آرٹ میڈیکل لیب رواں مالی سال میں مکمل ہو گی، صوبائی وزیر

لاہور:صوبائی وزیر محنت و انسانی وسائل انصر مجید خان نے پنجاب سوشل سکیورٹی آفس میں اہم اجلاس کی صدارت کی۔ کمشنر ادارہ سوشل سکیورٹی تنویر اقبال تبسم، وائس کمشنر حامد محمود سمیت دیگر افسرا ن نے اجلاس میں شرکت کی۔ صوبائی وزیر محنت کو پنجاب ایمپلائز سوشل سکیورٹی انسٹی ٹیوشن میں جاری پراجیکٹس بارے بریفنگ دی گئی۔  اس موقع پر صوبائی وزیر نے جاری پراجیکٹس کو جلد مکمل کرنے کی ہدایت کی انہوں نے کہا کہ سوشل سیکورٹی اسپتالوں میں میڈیکل اور پیرا میڈیکل سٹاف کی خالی اسامیوں پر جلد تعیناتی کی جائے جبکہ اسپتالوں میں میڈیکل مشینری کی دستیابی اور ضروری ٹیسٹو ں کی سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔

وزیر محنت نے میڈیکل ٹیسٹ کیلئے سنٹرل لیب کنریکٹ پر کام جلد مکمل کرنے کی ہدایت بھی کی انہوں نے کہا کہ سنٹرل لیب کنٹریکٹ  سے مریضوں کو ملک کی معروف لیب سے ٹیسٹ کروانے کی سہولت حاصل ہو گی۔ صوبائی وزیر نے تمام میڈیکل سنٹرز پر سی بی سی اور ای سی جی مشینوں کے دستیابی یقینی بنانے کی ہدایت کی۔ انہوں نے کہا کہ کسی افسر یا میڈیکل سٹاف کی جانب سے نا اہلی برداشت نہیں کی جائے گی۔  مزدوروں اور انکے اہل خانہ کو طبی سہولیات کی فراہمی میں کوئی کسر اٹھا نہ رکھی جائے۔

اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے صوبائی وزیر نے کہا کہ سوشل سیکورٹی اسپتال ملتان روڈ لاہور میں سٹیٹ آف دی آرٹ میڈیکل لیب رواں مالی سال میں مکمل ہو جائے گی۔ جبکہ سوشل سکیورٹی ڈسپنسریز اور میڈیکل سنٹرز پر ادویارت کی فراہمی یقینی بنا رہے ہیں۔مریضوں کو ڈسپنسریز اور میڈیکل سنٹرز میں ادویات اور بنیادی علاج کی فراہمی سے اسپتالوں میں رش کم ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ موذی امراض کے اعلاج کیلئے اسپتال میں مریض کا تمام ریکارڈ آن لائن موجود ہو گا، مریض کو محکمہ کے چکر نہیں لگانے پڑیں گے۔ صوبائی وزیر نے کہا کہ ایسا میکانزم بنا رہے ہیں جس سے انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ذریعے محکمہ کی پرفارمنس کو مانیٹر کیا جا سکے۔ جبکہ فارمیسی مینجمنٹ سسٹم سے ادویات کا کمپیوٹر آئزڈ ریکارڈ مرتب کرکے شفافیت کو یقینی بنایا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کرپشن کے خاتمہ اور کارکردگی میں بہتری کیلئے ادارہ کو آٹومیشن پر شفٹ کر رہے ہیں جس پر کام مکمل کر لیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام اسپتالوں کی پر فارمنس کو موبائل ایپلی کیشن کی ذریعے مانیٹر کیا جا رہا ہے اور بہتر کارکردگی نہ دکھانے والے اسپتالو ں کی سرزنش کی جاتی ہے۔ صوبائی وزیر نے کام کی جگہ پر ورکرز کو واش روم اور صاف پانی فراہم نہ کرنے والے بھٹوں اور فیکٹریز کے خلاف سخت ایکشن لینے کا حکم دیا۔ وزیر محنت نے افسران کو مزدوروں کو رجسٹرڈ نہ کروانے والے بھٹوں کیخلاف قانون کارروائی کرنے کی ہدایت کی۔