کورونا وبا کے بعد سیکھنے اور تربیت کے بارے میں غیر معمولی ورچول مواقع پیدا ہوئے ہیں: ماہرین

انٹرنیٹ کی دستیابی کے مسائل حل کرنے اور سیکھنے کے عمل کو دو طرفہ بنانے سے نئے حالات سے ہم آہنگی میں مدد ملے گی، ماہرین

کورونا وبا کے بعد سیکھنے اور تربیت کے بارے میں غیر معمولی ورچول مواقع پیدا ہوئے ہیں: ماہرین

اسلام آباد:  کورونا وبا کے باعث نئی درپیش صورتحال میں سیکھنے کے آن لائن عمل کے لیے غیر معمولی مواقع پیدا ہوئے ہیں۔ ٹیکنالوجی خصوصاً انٹرنیٹ کے ڈھانچے میں بہتری اور چند دوسرے ضروری اقدامات کی بدولت ان نئے مواقع سے بھرپور فائدہ اٹھایا جا سکتا ہے۔ سیکھنے اور تربیت سے متعلق قومی اور بین الاقوامی اداروں سے تعلق رکھنے ماہرین نے ان خیالات کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی) کے زیر اہتمام ’ کورونا وبا کے بعد سیکھنے اورتربیت کی ورچول دنیا کی صورتحال‘ کے موضوع پر منعقدہ آن لائن مکالمے کے دوران ا پنی آراء پیش کرتے ہوئے کیا۔

انسٹی ٹیوٹ آف انٹرنیشنل ایجو کیشن، امریکہ کی ریجنل ہیڈبرائے یورپ شیرل فرانسسکونی نے موضوع کے مختلف پہلوؤں کا احاطہ کرتے ہوئے کہا کہ وبا کے اس دور میں سیکھنے کے آن لائن عمل کے لیے ے پناہ مواقع پیدا ہوئے ہیں تاہم سیکھنے اور تربیت کے عمل کو اب نئی ورچول دنیا سے ہم آہنگ کرنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے کہا کہ اس میدان میں سیکھنے کے عمل کے حوالے سے تجربات کا تبادلہ اور سیکھنے کے عمل کو زیادہ شمولیتی بنانا اہم اقدامات ہونے چاہئیں۔

 ہنر مندی بڑھانے میں مدد دینے والے برطانیہ کے ادارے ایس ای اے سے تعلق رکھنے والے قیصر اے راجہ نے خیال ظاہر کیا کہ ورچول تربیت کے ساتھ ہم آہنگی تربیت کاروں کے لیے زیادہ بڑا چیلینج ہو گا جبکہ تربیت حاصل کرنے والے تربیتی عمل کو جلد قبول کرلیں گے۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں سیکھنے کے عمل کے ضمن میں ٹیکنالوجی کا استعمال پہلے ہی شروع ہو چکا تھا اور وبا نے محض اس عمل کو تیز تر کرنے میں کردار ادا کیا ہے۔

کینیڈا میں مقیم ماہر فیصل شفیق کا کہنا تھا کہ پاکستان کو سیکھنے اور تربیت کی ورچول دنیا میں پیدا ہونے والے مواقع سے فائد اٹھانے کے لیے کمیونٹی کی سطح پر انٹرنیٹ کی سہولت کو بہتر بنانا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ورچول تربیت سے بھر پور فائدہ اسی صورت میں اٹھایا جا سکتا ہے جب شرکاء کی ضروریات کا بھرپور تجزیہ کرنے کے بعد تربیت کا عمل شروع کیا جائے۔

ایس ڈی پی آئی کے سینئر ایڈوائزر برائے استعداد سازی بریگیڈئر (ر) محمد یاسین نے پاکستان میں سیکھنے اور تربیت کے مجموعی ماحول کا تجزیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہنئے حالات میں   سیکھنے کے عمل کو زیادہ سے زیادہ دو طرفہ بنائے جانے سے ورچول تربیت کو زیادہ با مقصد بنانے میں مدد ملے گی۔ ایس ڈی پی آئی کے شاہد منہاس نے قبل ازیں وبا کے سیکھنے اور تربیت کے ماحول پر مجموعی اثرات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس نئے ماحول کے تقاضوں کو سمجھنا اس سے ہم آہنگی کے لیے بنیادی اہمیت کا حامل ہو گا۔