صوبائی محکمہ انسانی حقوق واقلیتی امور کیجانب سے انٹرفیتھ ہارمنی کا اہم سیشن 

صوبائی وزیر انسانی حقوق و اقلیتی امور اعجاز عالم آگسٹین کی سیشن میں خصوصی شرکت   سیشن میں مختلف مذہبی و سیاسی قائدین اور سول سوسائٹی کے نمائندگان کی بھی شرکت  صوبائی حکومت کی ترجیحات میں امن، مذہبی ہم آہنگی اور رواداری کو فروغ دیناشامل ہے: اعجاز عالم آگسٹین

صوبائی محکمہ انسانی حقوق واقلیتی امور کیجانب سے انٹرفیتھ ہارمنی کا اہم سیشن 

لاہور: صوبائی محکمہ انسانی حقوق واقلیتی امور کیجانب سے انٹرفیتھ ہارمنی کے موضوع پر ایک اہم سیشن کا انعقاد لاہور کے ایک مقامی ہوٹل میں کیا گیا ، جس میں صوبائی وزیر اعجاز عالم آگسٹین کے ہمراہ ایم پی اے ہارون عمران گل، مختلف عقائد سے تعلق رکھنے والی مذہبی شخصیات،نمائندگان سول سوسائٹی اور دیگر متعلقہ محکموں کے افراد نے کثیر تعداد میں شرکت کی۔ ڈپٹی سیکرٹری انسانی حقوق محمد یوسف نے تمام مہمانوں کو خوش آمدید کہتے ہوئے سیشن کے انعقاد کے اغراض و مقاصد بارے تفصیل سے بتایا کہ محکمہ کو انٹرفیتھ ہارمنی کی ذمہ داری 30اپریل2019کو سونپی گئی جبکہ اس کے بعد محکمہ کی جانب سے ایک ڈرافٹ تیار کیا گیا جسکو باقاعدہ پالیسی بنانے کے لئے تمام اسٹیک ہولڈرز کی رضامندی کے لئے آج کا اہم سیشن منعقد کیاگیا ہے تاکہ تمام اسٹیک ہولڈرز کی قیمتی رائے کا پالیسی کا حصہ بنایا جا سکے۔

انہوں نے کہاکہ محکمہ کی جانب سے پالیسی میں واضح طور پر پر امن معاشرے کے قیام کے لئے اس میں ہر ایک کو مذہبی آزادی، ہراساں کیا جانا،کسی بھی قسم کا تشدد،جھوٹے مقدمات جیسے مسائل کے حل کے لئے تجاویز مرتب کی جا چکی ہیں جبکہ انٹرفیتھ پالیسی کو مختلف آگاہی سیمینار،ڈائیلاگ سیشن اور مذہبی رسومات وغیرہ کی ادائیگی میں نمایاں کیا جا رہا ہے۔سیشن سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر نے کہاکہ وزیراعلیٰ پنجاب کی جانب سے انٹرفیتھ ہارمنی کو وزارت کا حصہ بنانے کے بعد پنجا ب حکومت کی جانب سے بین المذاہن ہم آہنگی کو فروغ دینے کےلئے بے شمار اقدامات کئے جا چکے ہیں تاہم آج کا اہم سیشن امن کے پیغام کو موثر انداز میں آگے پہنچانے کا باعث بن جا سکے گا ۔

انہوں نے کہاکہ پنجاب حکومت کی اولین ترجیحات میں امن،مذہبی ہم آہنگی اور رواداری کو فروغ دینا شامل ہے جبکہ تحریک انصاف کی حکومت میں پاکستان بھر میں پر امن ماحول کےلئے تمام ممکنہ اقدامات کئے جا رہے ہیں تاہم اس کے لئے تمام اسٹیک ہولدرز کو ملکر ساتھ چلنا ہوگا۔ دیگر مقررین نے بھی اپنے خطاب کے دوران تعلیم کے ذریعے امن و محبت کو فروغ دینے اور آپس میں بھائی چارہ اور یگانگت کو فروغ دینے پر زو ر دیتے ہوئے محکمہ انسانی حقو ق کی کاوشوں کو بے حد سراہا۔

مقررین میں شامل بشپ سبسچیئن شاہ اور بشپ عرفان جمیل نے اس بات پر زور دیا کہ معاشرے میں عدم ، برداشت کے کلچر کو ختم کرنے کےلئے ایسے سیشن سمیت بہت سے مختلف پروگرامز کا انعقاد وقت کی اہم ضرورت ہے اور نوجوان نسل کو قائداعظم اور علامہ اقبال کے فرمودات سے روشناس کرانا بے حد ضروری ہے تاکہ ایک پر امن معاشرے کی تشکیل دیجا سکے۔انہوں نے کہاکہ یہ حقیقت ہے کہ بین العقائد ہم آہنگی کا حصول پرُ امن باہم معاشرت،تحمل،احسان،عفو و درگزر اور بردباری کے سنہری اصولوں پر مبنی ہوتا ہے لہٰذا امید ہے کہ تمام اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ ملکر معاشرے میں امن قائم کرنے کے ساتھ نفرتوں کا خاتمہ یقینی بنائیں گے۔