شمالی بھارت میں طوفانی بارشوں سے سیلاب اور لینڈ سلائیڈنگ سے کم از کم 24 افراد ہلاک ،ایک درجن سے زائد لاپتہ

شمالی بھارت میں طوفانی بارشوں سے سیلاب اور لینڈ سلائیڈنگ سے کم از کم 24 افراد ہلاک ،ایک درجن سے زائد لاپتہ

نئی دہلی :شمالی بھارت میں کئی دنوں سے جاری شدید بارشوں کے بعد آنے والے سیلاب اور لینڈ سلائیڈنگ سے کم از کم 24 افراد ہلاک اور ایک درجن سے زائد لاپتہ ہو گئے ۔بھارتی حکام کے مطابق جنوبی بھارتی ریاست کیرالہ میں آنے والے دنوں میں مزید بارشوں کا انتباہ بھی جاری کیا گیا ہے جہاں جمعہ سے اب تک سیلاب سے کم از کم 27 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

ہمالیہ کی ریاست اتراکھنڈ کے عہدیداروں نے بتایا کہ ایک دن قبل اسی طرح کے واقعات میں چھ افراد کی ہلاکت کے بعد منگل کو تازہ لینڈ سلائیڈنگ میں 18 افراد ہلاک ہوئے ۔ ان میں سےنینی تال شہر میں بارش کے دوران گذشتہ روز تین الگ الگ واقعات میں کم از کم 13 افراد ہلاک ہوئے ،یہ بارش انتہائی اونچے درجےکے سیلاب اورلینڈ سلائیڈنگ کا باعث بنی جس سے بڑے پیمانے پر املاک کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

ریاست اتراکھنڈ پولیس کے سربراہ اشوک کمار نے اے ایف پی کو بتایا کہ ریاست میں دو دنوں میں چوبیس افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ پیر کو ریاست میں سیلاب اور لینڈ سلائیڈنگ سے متعلقہ حادثات میں چھ اموات ہوئیں اور اب تک 18 افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں۔ مقامی سول آفیسر پردیپ جین نے اے ایف پی کو بتایا کہ مرنے والوں میں سے پانچ کا تعلق ایک ہی خاندان سے تھا جن کا مکان بڑے پیمانے پر لینڈ سلائیڈنگ سے دب گیا تھا۔ شمالی الموڑہ ضلع میں ایک اور مٹی کا تودہ گرنے سے پانچ افراد ہلاک ہوگئے جب کہ بڑے بڑے پتھروں اور مٹی سے بنی دیوار منہدم ہوگئی اور اس نے گھر کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

بھارتی محکمہ موسمیات نے منگل کے روز اپنے موسمی الرٹ کے درجے کو بڑھایا ہے اور آئندہ دو روز میں خطے میں بارش الرٹ “بھاری” سے “بہت زیادہ” کردیا ہے ۔ محکمہ موسمیات نے بتایا کہ پیر کے روز کئی علاقوں میں 400 ملی میٹر (16 انچ) سے زیادہ بارش ہوئی ، جس کی وجہ سے لینڈ سلائیڈنگ اور سیلاب آیا۔

حکام نے متاثرہ علاقوں میں سکولوں کو بند کرنے کا حکم دیا ہے اور ریاست میں تمام مذہبی اور سیاحتی سرگرمیوں پر پابندی عائد کردی ہے ۔نینی تال جھیل کے قریب گھٹنوں گھٹنوں پانی کھڑا ہے ، جو کہ ملک بھر کے سیاحوں کا ہاٹ سپاٹ ہے اور گنگا رشیکیش (دریا)میں بھی طغیانی ہے۔ کوسی ندی کے بہہ جانے کے بعد رام گڑھ میں ایک سیاحتی مقام میں 100 سے زائد سیاح پھنس گئے ہیں ۔