امریکا نے وینیزویلا جانے والے جہازوں کیلئے مسائل پیدا کیے تو جوابی کارروائی کریں گے، ایران

امریکا نے وینیزویلا جانے والے جہازوں کیلئے مسائل پیدا کیے تو جوابی کارروائی کریں گے، ایران

ایران کے صدر حسن روحانی نے امریکا کو خبردار کیا ہے کہ اگر اس نے وینیزویلا ایندھن لے کر جانے والے بحری جہازوں کے لیے مسائل پیدا کرنے کی کوشش کی تو وہ جوابی کارروائی کے لیے تیار رہے۔ پانچ ٹینکرز پر مشتمل جہاز ایرانی تیل ایندھن کی مشکلات سے دوچار وینیزوولا کی جانب رواں دواں ہے اور وہ کیریبیئن جزیروں کے راستے وہاں پہنچے گا اور ان کی اتوار تک وطن واپسی کا امکان ہے۔

حسن روحانی نے قطر کے امیر شیخ تمیم بن حماد التھانی سے ٹیلیفونک گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگر کیریبیئن یا دنیا میں کسی بھی جصے میں امریکا نے ہمارے ٹینکرز کے لیے مسائل پیدا کرنے کی کوشش کی تو وہ مشکلات سے دوچار ہو جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ایران کبھی بھی کسی بھی تنازع کا آغاز نہیں کرے گا اور ہمارے پاس اپنی خودمختاری اور علاقائی سالمیت کے دفاع اور قومی مفادات کے تحفظ کا قانونی حق ہے اور ہمیں امید ہے کہ امریکا کوئی غلطی نہیں کرے گا۔

دونوں حکومتوں کے ذرائع کے مطابق ایران وینیزویلا کو 15لاکھ بیرلز سے زائد ایندھن کی ترسیل کر رہا ہے۔ یہ بھی پڑھیں: امریکا نے ایرانی وزیر داخلہ سمیت 7 اہم عہدیداروں پر پابندی لگادی اس امداد سے دونوں ملکوں کے درمیان ایک سفارتی تعلق بھی قائم ہو گیا ہے جہاں دونوں ہی ملکوں کو امریکی پابندیوں کا سامنا ہے۔ ایران کے تحفظات بے بنیاد محسوس نہیں ہوتے کیونکہ حالیہ عرصے میں امریکا نے کیریبیئن پانیوں میں اپنی بحری صلاحیت میں اضافہ کیا ہے اور اس کی وجہ منشیات کی اسمگلنگ کی روک تھام بتائی گئی ہے لیکن امریکا کے اس عذر سے ایران اتفاق نہیں کرتا۔

البتہ پینٹاگون کے ترجمان جوناتھ ن ہوفمین نے ایرانی سمندری جہازوں کے خلاف کسی بھی قسم کے آپریشن یا کارروائی کے حوالے سے سراسر لاعلمی کا اظہار کیا۔ وینیزویلا کے وزیر دفاع نے کہا ہے کہ جیسے ہی ایرانی جہاز ان کی معاشی حدود میں داخل ہوں گے تو وہ انہیں اپنی حفاظت میں لے لیں گے۔