بلیک ہولز حادثاتی طور پر سونا، چاندی اور دیگر دھاتیں پیدا کرتے ہیں، ماہرین کا حیران کن انکشاف

بلیک ہولز حادثاتی طور پر سونا، چاندی اور دیگر دھاتیں پیدا کرتے ہیں، ماہرین کا حیران کن انکشاف

لاہور:۔ سائنسدانوں نے انکشاف کیا ہے کہ بلیک ہولز بھاری دھاتیں بنانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ سائنس میگزین کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سونا، چاندی، تھوریم اور یورینیم جیسی دھاتوں کی پیداوار توانائی سے بھرپور ماحول میں ہوتی ہے خلاء میں سُپر نووا (ستاروں کے آپس میں ٹکرانے کا عمل) کے ذریعے ہی اتنی بڑی مقدار میں توانائی خارج ہوتی ہے جس سے یہ دھاتیں بنتی ہیں۔

ماہرین نے تحقیق میں بتایا ہے کہ یہ دھاتیں اُس چکر دار افراتفری کی سی کیفیت (Swirling Chaos) کے نتیجے میں پیدا ہوتی ہیں جو بلیک ہول کے گھومنے کی وجہ سے اُس وقت پیدا ہوتا ہے جب یہ خلا میں اپنے گرد موجود چیزوں کو نگلنا شروع کرتا ہے۔ ایسی سخت ماحول میں نیوٹرینو کے تیزی سے اخراج سے پروٹونز نیوٹرونز میں تبدیل ہو جاتے ہیں جس سے نیوٹرونز کی وہ مطلوبہ تعداد پیدا ہوتی ہے جو بھاری دھاتیں بنانے کیلئے کافی ہے۔

جرمنی میں جی ایس آئی ہیلم ہولٹز سینٹر فار ہیون آئن ریسرچ کے ماہر طبعی فلکیات اولیور جسٹ نے بتایا ہے کہ اپنی تحقیق میں ہم نے منظم انداز سے اُن مظاہر پر غور کیا ہے جو نیوٹرینوز کے اخراج کی شرح کا سبب بنتے ہیں اور پروٹونز سے نیوٹرون بنتے ہیں۔ اس کیلئے ہم نے کمپیوٹر سیمولیشنز کا سہارا لیا اور یہ معلوم کیا کہ بلیک ہولز کے گرد چیزوں کو نگلے جانے کے وقت بننے والی ڈسک نیوٹرونز سے بھرپور ہوتی ہیں۔