فلپ مورس پاکستان نے ایچ آر ڈی ایشیا”ایمپلائر آف چوائس 2020“جیت لیا

کراچی:.  فلپ مورس انٹرنیشنل کے ملحق ادارے فلپ مورس (پاکستان) لمٹیڈ نے ”ایمپلائر آف چوائس  (Employer of Choice)  2020“جیت لیا۔ ادارے کو یہ ایوارڈ ہیومین ریسورس ڈائریکٹر(ایچ آرڈی) ایشیا۔۔۔۔۔ کی جانب سے دیاگیا۔ اِسی سال کے آغاز میں، فلپ مورس پاکستان نے سالانہ سی ایس آر ایوارڈ 2020 بھی جیتا تھا جو نیشنل فورم فار انوائرنمنٹ اینڈ ہیلتھ فار کمیونٹی ڈیویلپمنٹ اینڈ سروسز کی جانب سے دیا گیا تھا۔

ادارے کو ”ایمپلائرآف چوائس ایوارڈ 2020“ ایک سروسے کے بعد دیا گیا جس میں ایسی کمپنیاں شامل تھیں جو پیشہ ورانہ ترقی او ر بہبود میں اسٹریٹجک پروگراموں کے ذریعے بہتری لا کراپنے ملازمین کا تجربہ مسلسل بہتر بنا رہیں تھیں۔فلپ مورس (پاکستان) لمٹیڈ کو یہ ایوارڈ ایمپلائی لرننگ اینڈ پروفیشنل ڈیویلپمنٹ (employee learning)، ریوارڈز اینڈ ریکگنیشن(rewards & recognition) کے اقدامات اور دیگر ایسے پروگراموں کی بنیاد پر دیا گیا جن میں ملازمین کی صحت و بہبود، کام اور زندگی کے درمیان توازن، لیڈرشپ، شمولیت اور تنوع شامل تھے۔

یہ ایوارڈ ملنے پر فلپ مورس)پاکستان(لمٹیڈ کی ڈائریکٹر پیپل اینڈ کلچر، سارہ حسن نے کہا کہ وہ اور  فلپ مورس پاکستان کی ٹیم اِس ایوارڈ کے ملنے پر بہت پرجوش ہیں جو ظاہر کرتا ہے کہ فلپ مورس پاکستان ایک ممتاز ایمپلائر ہے اور اپنے تمام ملازمین کے لیے کام کے ماحول میں بہتری کی غرض سے کمپنی کی مسلسل کوششوں کا اعتراف ہے۔

سارہ حسن نے مزید کہا:”یہ سال تبدیلی کا سال ثابت ہوا ہے جس کے دوران تمام اداروں کو وبا کے باعث کام کرنے کے نئے طریقے اختیار کرنا تھے۔ فلپ مورس پاکستان نے جس طرح اِن نئے معمولات کو اختیار کیا ہمیں اْس پر فخر ہے اور ہم اپنی ٹیموں کے انتہائی شکرگزار ہیں کہ انہوں نے بزنس کے تسلسل کی خاطر لچکدار اور مددگار رویہ اختیار کیا۔ ہم نے ورچوئل ٹیموں کی صورت میں کام کرنے کے ساتھ مصروفیت کا اعلیٰ درجہ برقرار رکھنا، روابط اور حوصلہ افزائی کرنا بھی سیکھا ہے۔ اس ایوارڈ سے ہماری زبردست حوصلہ افزائی اور تائید ہوئی ہے کہ ہمارے ایمپلائی پروگرامز اور کمپنی کا ماحول، دونوں بہت مضبوط ہیں۔“

اپنی بات جاری رکھتے ہوئے سارہ حسن نے مزید کہا کہ فلپ مورس پاکستان مسلسل ایسے طریقے دریافت کر رہا ہے جن سے وہ اپنے ملازمین کے تجربے کو مزید بہتر بنا سکے اور ایک  ایسے ماحول کے لیے پرعزم ہے جو فعال انداز میں ملازمین کی بہبود،شمولیت اور تنوع کو فروغ دیتا ہو۔