پاکستان کا امریکی خارجہ کی انوسٹمنٹ کلائیمیٹ 2021سے متعلق جاری رپورٹ کا سخت نوٹس ، پاکستانی عدالتی نظام سے متعلق تبصرہ غیر ضروری و غیر معقول قرار

پاکستان کا امریکی خارجہ کی انوسٹمنٹ کلائیمیٹ 2021سے متعلق جاری رپورٹ کا سخت نوٹس ، پاکستانی عدالتی نظام سے متعلق تبصرہ غیر ضروری و غیر معقول قرار

اسلام آباد :پاکستان نے امریکی خارجہ کی جانب سے انوسٹمنٹ کلائیمیٹ 2021سے متعلق جاری رپورٹ کا سخت نوٹس لیتے ہوئے رپورٹ میں پاکستان کے عدالتی نظام سے متعلق تبصرے کو غیر ضروری اور غیر معقول قرار دیا ہے۔

منگل کو ترجمان دفتر خارجہ نے امریکی رپورٹ سے متعلق میڈیا کے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان میں عدلیہ آزاد اور عدالتیں ملکی آئین اور قوانین کے مطابق کام کر رہی ہیں۔

ترجمان کا کہنا تھا کہ رپورٹ میں الزامات غلط،حقائق کے برعکس اور گمراہ کن ہیں۔ترجمان نے کہا کہ متحرک جمہوریت کی حیثیت سے ، حکومت پاکستان ریاست کی انتظامیہ ، مقننہ اور عدلیہ شاخوں کے مابین اختیارات کی علیحدگی پر پختہ یقین رکھتی ہے،

پاکستان کی عدلیہ پر کسی قسم کے جبر یا دبائو کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ترجمان نے کہا کہ اس رپورٹ میں جو بے بنیاد دعوے کیے گئے ہیں وہ ہر سطح پر پا کستانی عدالتوں کے لاتعداد فیصلوں کے منافی ہیں جو عدلیہ کی آزادی کے اعلیٰ معیاروں پر پورا اترتے ہیں۔

اگرچہ رپورٹ میں وبائی امراض کی وجہ سے انتہائی مشکل حالات کے باوجود پاکستان کی جانب سے اپنے کاروبار اور سرمایہ کاری کے ماحول کو بہتر بنانے میں کی جانے والی پیشرفت اور اصلاحات کو تسلیم کیا گیا ہے ، لیکن ا س میں پاکستان کے ریگولیٹری فریم ورک میں مبینہ کوتاہیوں کی قیاس آرائی کی گئی ہے اور ناقابل تصدیق ذرائع سے اپنے نتائج اخذ کیے ہیں۔

ترجمان دفتر خارجہ کا مزید کہنا تھا کہ بین الاقوامی برادری کیساتھ معیشت،تجارت اور سرمایہ کاری کے شعبوں میں باہمی و مفید تعاون حکومت پاکستان کی اولین ترجیحات میں شامل ہے، ہم پاکستان کی جغرافیائی، اقتصادی صلاحیت کو بہتر طور پر عملی جامہ پہنانے کے لئے اقدامات جاری رکھیں گے.