چیف سیکرٹری کاسرکاری گندم کا کوٹہ بیچنے والی غیر فعال ملوں کو بندکرنے کا حکم  

  سہولت بازاروں میں قیمتوں کیساتھ ساتھ اشیاء کے معیار پر بھی نظر رکھی جائے، افسران کو ہدایت اشیاء ضروریہ کی رعائتی نرخوں پر دستیابی کیلئے پنجاب حکومت نے 380سہولت بازاروں کو فعال کر دیا، اجلاس کو بریفنگ

 چیف سیکرٹری کاسرکاری گندم کا کوٹہ بیچنے والی غیر فعال ملوں کو بندکرنے کا حکم  

لاہور:چیف سیکرٹری پنجاب نے ہدایت کی ہے کہ گندم کے سرکاری کوٹہ میں اضافہ کے بعد فلور ملوں کی سخت مانیٹرنگ کی جائے۔انہوں نے کہا کہ صوبے بھر میں آٹے کی مقررہ قیمت پر وافر مقدارمیں دستیابی یقینی بنانے کیلئے اضلاع کو انکی ڈیمانڈ کے مطابق گندم کاکوٹہ فراہم کیا جائے گا، انتظامی افسران فلور ملوں میں گندم کی پسائی اور مارکیٹ میں سپلائی کے عمل کی مکمل نگرانی کریں اور گندم کا کوٹہ بیچنے والی غیر فعال ملوں کو صرف جرمانے ہی نہیں بلکہ بند کر دیا جائے۔

انہوں نے یہ ہدایت پرائس کنٹرول اقدامات کا جائزہ لینے کیلئے منعقد اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کی۔اجلاس میں سہولت بازاروں اور مارکیٹ میں اشیاء ضروریہ بالخصوص آٹے اور چینی کے نرخوں اور دستیابی اور صوبے میں ذخیرہ اندوزوں، گرانفروشوں کیخلاف جاری کریک ڈاؤن کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ڈویژنل کمشنرز نے چیف سیکرٹری کو اضلاع میں اشیاء کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے کیلئے کئے جانیوالے اقدامات بارے بریفنگ دی۔

   چیف سیکرٹری نے کہا کہ وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایات کے مطابق مہنگائی کے مسئلے پر قابو پانے کیلئے جامع لائحہ عمل کے تحت اقدامات کئے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت آٹے پر اربوں روپے کی سبسڈی فراہم کر رہی ہے جسکا مقصدعام آدمی کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سہولت بازاروں میں تمام ضروری سہولیات مہیا کی جائیں لیکن غیر ضروری اخراجات کسی صورت نہ  کئے جائیں۔ انہوں نے دکانوں پر ریٹ لسٹوں کی با قاعدگی سے چیکنگ کرنے سے متعلق ہدایات بھی جاری کیں۔ انہوں نے کہا کہ سہولت بازاروں میں قیمتوں کیساتھ ساتھ اشیاء کے معیار پر بھی نظر رکھی جائے، صارفین کو ریلیف کی فراہمی ترجیح ہے۔

اجلاس کو بریفنگ میں بتایا گیا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایت کے مطابق صوبے میں 380سہولت بازاروں کو فعال کر دیا گیا ہے جہاں آٹااور چینی سمیت اشیاء ضروریہ رعائتی نرخوں پر وافر مقدار میں دستیاب ہیں،حکومتی اقدامات کے باعث اوپن مارکیٹ میں بھی اشیاء کے نرخوں میں کمی کا رجحان دیکھنے میں آیا ہے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ قیمت ایپ پر شہریوں کی جانب سے موصول ہونے والی شکایات کا بر وقت ازالہ کیا جا رہا ہے اوراضلاع میں ٹائیگر فورس کو پرائس کنٹرول اقدامات کے سلسلے میں ذمہ داریاں تفویض کر دی گئیں ہیں۔ سیکرٹری خوراک، سی ای او اربن یونٹ، چیئرمین پی آئی ٹی بی، کمشنر لاہور،ڈائریکٹر فوڈ پنجاب،سپیشل سیکرٹری ایگریکلچر مارکیٹنگ نے اجلاس میں شرکت کی جبکہ ایڈیشنل چیف سیکرٹری (جنوبی پنجاب)،ڈویژنل کمشنرز، آر پی اوز، ڈپٹی کمشنرز اور ڈی پی اوز ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوئے۔