وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی نگرانی میں اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں استحکام کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں: ملک محمد انور

ڈی سی آفس اٹک میں آٹا،چینی اور دیگر اشیائے ضروریہ کی قیمتوں سے متعلق جائزہ اجلاس کی صدارت کر تے ہوئے کیا: صوبائی وزیر مال

وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی نگرانی میں اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں استحکام کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں: ملک محمد انور

لاہور: صوبائی وزیر مال ملک محمد انور نے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی نگرانی میں اشیائے خورونوش کی قیمتوں میں استحکام کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں اور اس ضمن میں تمام سٹیک ہولڈرز کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار ڈی سی آفس اٹک میں آٹا،چینی اور دیگر اشیائے ضروریہ کی قیمتوں سے متعلق جائزہ اجلاس کی صدارت کر تے ہوئے کیا۔اجلاس میں ممبر صوبائی اسمبلی ملک جمشید الطاف، ڈپٹی کمشنر اٹک علی عنان قمر،اسسٹنٹ کمشنر اٹک زرمینہ وزیر،ڈی او آئی پی ڈبلیو ایم رابعہ نسیم، انجمن تاجران اور دیگر متعلقہ افراد نے شر کت کی۔صوبائی وزیر کو ضلع بھر میں اشیائے ضروریہ بالخصوص آٹا اور چینی کی قیمتوں کو کنٹرول کر نے کے بار ے میں بر یفنگ دی گئی۔

بر یفنگ دیتے ہوئے بتا یا گیا کہ سستے سہولت بازار ضلع اٹک کی تمام تحصیلوں میں قائم کر دیے گئے ہیں اور ان بازاروں کی تعداد میں اضافہ کیا جارہا ہے۔سہولت بازاروں میں اشیائے خورونوش ارزاں نر خوں پر دستیاب ہیں۔ ضلع بھر میں 20 کلو آٹے کا تھیلا سر کاری ریٹ 845 روپے اور10 کلو کا تھیلا 420 روپے پر فر وخت ہو رہا ہے اور اس سلسلے میں آٹے کی فر وخت کے لیے 14 سے زائد خصوصی پو ائنٹس بنائے گئے ہیں۔ سہولت بازاروں میں چینی95روپے فی کلو تک فر وخت ہورہی ہے۔اجلاس میں پرائس مجسٹریٹ کی کاروائیوں کا بھی جائزہ لیا گیا اور اس موقع پر بریفنگ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ ضلع بھر میں پرائس مجسٹریٹ گراں فروشی اور ذخیرہ اندوزی کے خلاف کاروائی کر رہے ہیں اور اس کے ساتھ بھاری جرمانے عائد کیے جا رہے ہیں اور ایف آئی آرز کا اندراج بھی کیا جارہا ہے۔اس ضمن میں اب تک01  لاکھ 12 ہزار09 سو40 معائنے کیے گئے اور 02 کروڑ سے زائد کے جر مانے عائد کیے گئے۔

10 ہزار 83 افراد نے جر مانہ ادا کیااور 110  افرد کو گر فتار کیا گیا۔ اشیائے خوردونوش کی قیمتوں کو مستحکم رکھنے کے لیے پرائس کنٹرول کمیٹی اور انجمن تاجران کے تعاون سے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ صوبائی وزیر مال کو بتایا گیا کہ ضلع بھر میں اشیائے خوردونوش کی وافر فراہمی کو یقینی بنایا جارہا ہے۔انسداد ملاوٹ مہم میں 4845 معائنے کیے گئے جن میں 13 لاکھ روپے سے زائد جر مانے عائد کیے گئے۔اجلاس سے خطاب کر تے ہوئے ملک محمد انور نے کہا کہ موجودہ مہنگائی کی لہر کو قابو میں کر نے کے لیے وزیر اعلیٰ پنجاب کی نگرانی میں وزراء کی خصوصی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو صوبہ بھر کے تمام36 اضلاع میں اشیائے ضروریہ خصوصاّ آٹا اور چینی کی قیمتوں میں استحکام لانے کے لیے نگرانی اور اقدامات کر ے گی۔ وہ خود باقاعدگی سے ہر ہفتے اشیائے خوردونوش کی قیمتوں سے متعلق اجلاس منعقد کر کے تمام سر گر میوں کی نگرانی کر رہے ہیں۔

انہوں نے ضلع بھر کی انتظامیہ کو ہدایت کہ وہ روزانہ کی بنیاد پر سبزی و فروٹ منڈیوں کا دورہ کر یں اور وہاں پر نیلامی کے عمل کا جائزہ لیں۔ گندم کی قیمت کنٹرول کر نے کے لیے پنجاب سیڈ کارپوریشن کے افسران سے بات کی جائے اور اس ضمن میں موثر لائحہ عمل مر تب کیا جائے۔ عوام سے اپیل کر تے ہوئے صوبائی وزیر ملک محمد انور نے کہا کہ وہ حکومت پنجاب کی جانب سے جاری کر دہ قیمت ایپ اپنے موبائل پر ڈاؤن لوڈ کر یں اور گراں فروشی یا ذخیرہ اندوزی کے خلاف شکایات درج کر وائیں تاکہ موجودہ مہنگائی کا مکمل طور پر خاتمہ ممکن بنایا جاسکے۔ انہوں نے ا نجمن تاجرا ن سے بھی اپیل کی کہ وہ عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کر نے کے لیے خصوصی اقدامات کریں۔

صوبائی وزیر ملک محمد انور نے سی ایس آر کے اجلاس کی صدارت کی اور عوامی فلاح وبہبود کے لیے شر وع کیے جانے والے منصوبوں کا جائزہ لیا۔اس ضمن میں انہیں متعلقہ افسران کی جانب سے تفصیلی بر یفنگ دی گئی۔ اجلاس میں ممبر قومی اسمبلی ملک سہیل خان کمڑیال،ممبر صوبائی اسمبلی ملک جمشید الطاف،ڈی سی علی عنان قمر،اے ڈی سی فنانس ضیغم نوازچوہدری اور دیگر متعلقہ افراد نے شر کت کی۔ بعدازاں صوبائی وزیر مال ملک محمد انور نے سستے سہولت بازار کا دورہ کیا۔وہاں پر اشیائے خورونوش کی کے سٹالز اور قیمتوں کا جائزہ لیا۔اس موقع پر ان کے ہمراہ ممبر صوبائی اسمبلی ملک جمشید الطاف، ڈپٹی کمشنر اٹک علی عنان قمر،اسسٹنٹ کمشنر زرمینہ وزیر،چیف آفیسر بلدیہ اٹک سردار ساجد خان اور دیگر افسران بھی موجود تھے۔دورے کے دوران میڈ یا سے بات چیت کر تے ہوئے ملک محمد انور نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان عمران خان اور وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزادر مہنگائی کی موجودہ لہر کو کنٹرول کر نے کے لیے ہر ممکن اقدامات کر رہے ہیں اور اس ضمن میں روزانہ کی بنیاد پر حالات کی نگرانی جارہی ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بھارت سے تجارتی تعلقات بحال کر نے کا سوال ہی پیدا نہیں ہو تا۔پاکستان موجودہ قیادت کے ساتھ تر قی کی منازل طے کر ے گا اور خوشحال ہو گا۔

٭٭٭