وادی کاغان اور ناراں پاکستان کی خوبصورت وادیاں ہیں،مقامی لوگ بہت مہمان نواز ہیں ، سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر

وادی کاغان اور ناراں پاکستان کی خوبصورت وادیاں ہیں،مقامی لوگ بہت مہمان نواز ہیں ، سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر

مانسہرہ :قومی اسمبلی کے سپیکر اسد قیصر نے کہا ہے کہ پاکستان قدرتی حسن سے مالامال ملک ہے جس کی مثال ناران و کاغان کی حسین وادیوں سے دی جاتی ہے، پاکستان میں سیاحت کے زیادہ سے زیادہ مواقع فراہم کرنا ہماری اولین ترجیح ہے، سیاحتی مقامات پر عوام کو سہولیات فراہم کرنے کیلئے حکومت متعدد اقدامات اٹھا رہی ہے، ہماری خواہش ہے کہ اس خطہ کی خوبصورتی و رونق ہمیشہ قائم و دائم رہے۔ وہ سوموار کو پی ٹی آئی کے رکن قومی اسمبلی صالح محمد خان سواتی کی جانب سے دورہ ناراں و کاغان کے موقع پر صحافیوں سے بات چیت کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ یہاں کے سیاحتی مقامات کا دنیا بھر کی خوبصورت ترین جگہوں میں شمار ہوتا ہے، حکومت سیاحوں کی سہولیات کی فراہمی کیلئے مزید اقدامات اٹھا رہی ہے، ہم ان علاقوں کو مزید ترقی دیکر دنیا بھر کے سیاحوں کو اس جانب راغب کر سکتے ہیں۔

اسد قیصر نے کہا کہ وادی کاغان اور ناراں خوبصورت وادیاں ہیں، یہاں آ کر انسان دنیا ہی بھول جاتا ہے، یہاں کے لوگ بہت مہمان نواز ہیں، غیر ملکیوں کو اس جانب راغب کر کے حکومت ریونیو کی مد میں بڑی رقم حاصل کر سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں کورونا کی وجہ سے متاثر ہونے والے کاروبار دوبارہ سے بحال ہونا شروع ہو گئے ہیں، سیاحتی مقامات آباد ہونا شروع ہو گئے ہیں، سیاح لمبے عرصہ کے بعد سیاحتی مقامات کا رخ کر رہے ہیں۔

سپیکر اسد قیصر نے کہا کہ لوگوں کو اب بھی حکومت کی جانب سے کورونا کی جاری ایس او پیز پر عمل کرنا ہو گا، خدنخواستہ کہیں ایسا نہ ہو کہ دوبارہ سے کورونا کی شرح میں اضافہ ہو اور پھر سے ہمیں اپنے کاروبار اور سیاحتی مقامات کو بند کرنا پڑے۔ انہوں نے کہا کہ علاقہ کی محرومیوں کے حوالہ سے وہ وزیراعظم عمران خان سے بات کریں گے تاکہ انہیں جلد از جلد ختم کیا جا سکے۔ قبل ازیں سپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر وزیراعلیٰ کے معاون خصوصی خیبر پختونخوا سید احمد حسین شاہ کی دعوت پر چیف ہاؤس کاغان پہنچے، معاون خصوصی سید احمد حسین شاہ نے انہیں خوش آمدید کہا۔ رکن قومی اسمبلی حاجی صالح محمد خان سواتی، دیگر ایم این اے، سینیٹرز کے علاوہ معززین علاقہ کی بڑی تعداد موجود تھی۔ اس موقع پر دونوں رہنماؤں کے مابین علاقائی اور سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال ہوا.